خوش رہنے کے پانچ طریقے

امریکہ کی ییل یونیورسٹی میں علم نفسیات اور علم ادراک کی پروفیسر لوری سینٹوس کا کہنا ہے کہ سائنس نے یہ ثابت کر دیا ہے کہ خوش رہنے کے لیے دانستہ کوشش کی ضرورت ہے۔اگرچہ یہ آسان نہیں اور اس کے لیے وقت درکار ہوتا ہے۔وہ یہ جانتی ہیں کیونکہ وہ علم نفسیات اور بہتر زندگی کی تعلیم دیتی ہیں۔ییل یونیورسٹی کی 316 سالہ تاریخ میں ان کی کلاس سب سے زیادہ مقبول ہے۔ان کے پاس 1200 طلبہ ہیں اور انھوں نے حال ہی میں یونیورسٹی کے کسی کورس میں داخلے کا ریکارڈ توڑا ہے۔
ان کا کورس مثبت علم نفسیات کے اصول پر مبنی ہے۔ یہ علم نفسیات کی وہ شاخ ہے جس میں خوشی اور عادات و اطوار میں تبدیلی کا مطالعہ کیا جاتا ہے۔لیکن آپ ان تمام اصولوں کو روز مرہ کی زندگی میں کیسے عملی جامہ پہنائیں گے؟
پروفیسر سینٹوس کہتی ہیں کہ ’خوش رہنا یونہی نہیں آتا ہے اس کے لیے آپ کو مشق کرنی ہوتی ہے۔ ٹھیک ویسے ہی جیسے موسیقار اور ایتھلیٹ مسلسل بہتر کرنے اور کامیاب ہونے کے لیے ریاض اور مشق کرتے ہیں۔ہفتے میں دو دن پروفیسر سینٹوس اپنے طلبہ کو خوش رہنے کے بارے میں تعلیم دیتی ہیں۔وہ ان سے زیادہ خوش رہنے اور صحت مند زندگی کے متعلق اپنی ذاتی ترقی کے پروجیکٹ ‘ہیک یو’سیلف ‘کی ترغیب دیتی ہیں۔اگر آپ ییل نہیں جا سکتے اور خود کو خوش رکھنا چاہتے ہیں تو کیا کریں؟ذیل میں پروفیسر سینٹوس کے خوش رہنے کے چند نکات پیش کیے جا رہے ہیں:

 

 

 

 

 

 

 

 

 

1. شکر اور احسان مندی کی ایک فہرست بنائیں:
پورے ایک ہفتے تک ہر رات پروفیسر سینٹوس اپنے سٹوڈنٹس کو ان چیزوں کو لکھنے کے لیے کہتی ہیں جن کے لیے وہ شکر گزار ہیں۔یہی ان کی شکر اور احسان مندی کی فہرست ہوتی ہے۔پروفیسر سینٹوس کہتی ہیںکہ یہ بظاہر معمولی بات نظر آتی ہے لیکن ہم نے دیکھا ہے کہ جو طلبہ پابندی سے اس کی مشق کرتے ہیں وہ زیادہ خوش رہتے ہیں۔
2. زیادہ اور بہتر طریقے سے نیند لیں:
سینٹوس کے مطابق اس آسان مشق پر فتح پانا سب سے مشکل ہے۔اس میں ایک ہفتے تک رات میں آٹھ گھنٹے سونے کا چیلنج ہوتا ہے۔پروفیسر سینٹوس کہتی ہیں کہ ‘یہ عجیب لگ سکتا ہے لیکن ہم جانتے ہیں کہ زیادہ اور اچھی نیند سے آپ کے ڈپریشن میں جانے کے خطرات کم ہوتے ہیں اور آپ میں مثبت رویہ پیدا ہوتا ہے۔
3. مراقبہ: آپ کو ہر دن دس منٹ تک استغراق کے عالم میں رہنا ہے:
پروفیسر سینٹوس بتاتی ہیں کہ ایک طالب علم کے طور پر مراقبے میں جانے سے انھیں بہتر محسوس ہوتا تھا۔اب وہ پروفیسر ہیں اور وہ اپنے سٹوڈنٹس کو مراقبے میں جانے یا پوری توجہ سے دوسرے کام کرنے کی ترغیب دیتی ہیں جس سے آپ کو زیادہ خوش رہنے میں مدد ملتی ہے۔
4. زیادہ وقت اہل خانہ اور دوستوں کے ساتھ گزاریں:
پروفیسر سینٹوس کہتی ہیں کہ تازہ تحقیق میں واضح طور پر پتہ چلا ہے کہ اپنے دوستوں اور اہل خانہ کے ساتھ اچھا وقت گزارنے سے آپ زیادہ خوش رہتے ہیں۔صحت مند آپسی رشتہ اور سماجی رابطہ جس میں آپ لوگوں سے بالمشافہ ملتے ہیں ان سے آپ کی فلاح و بہبود میں واضح بہتری آتی ہے۔پروفیسر سینٹوس کا کہنا ہے کہ ‘اس میں آپ کا کچھ جاتا نہیں بس آپ کو اس بات سے باخبر رہنا ہے کہ آپ کس طرح لوگوں کے ساتھ اپنا وقت گزار رہے ہیں۔خانہ کے ساتھ اچھا وقت گزارنے کی اہمیت کو آپ کم نہیں کر سکتے۔
وقت کا ادراک آپ کی خوشی کے لیے بہت اہم ہے۔’ہم اکثر دولت کو پیسے میں گنتے ہیں لیکن پروفیسر سینٹوس کا کہنا ہے کہ تحقیق میں پتہ چلا ہے کہ دولت کا اس بات سے قریبی تعلق ہے کہ ہمارے پاس کتنا وقت ہے۔
5 سوشل نٹورک میں کمی اور اصل رابطے میں اضافہ:پروفیسر سینٹوس کا کہنا ہے کہ سوشل میڈیا سے حاصل ہونے والے خوشی کے جھوٹے احساس میں بہنے کی ضرورت نہیں ہے۔اختیار کریں اور فون کو دور رکھیں۔ان کا کہنا ہے کہ تازہ تحقیق میں پتہ چلا ہے کہ جو لوگ انسٹاگرام جیسے سوشل نیٹورک کا استعمال کرتے ہیں وہ ان لوگوں سے کم خوش رہتے ہیں جو ان کا استعمال نہیں کرتے۔

Share Article

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *