کرکٹ کے لیجنڈ ثابت ہوئے محمداظہرالدین

ٹیم انڈیاکے سب سے کامیاب اور دنیاکے فنکارانہ بلے بازمحمداظہرالدین کسی تعارف کے محتاج نہیں ہیں۔ ہندوستانی کرکٹ کی تاریخ میں ہمیشہ ان کانام سرفہرست رہے گا۔ محمد اظہر الدین کی پیدائش 8فروری 1963 میں حیدرآباد میں ہوئی تھی۔اظہربچپن سے ہی حیدرآبادمیں بڑے ہوئے اور انہو ںنے آل سینٹ ہائی اسکول ،حیدرآبادابتدائی تعلیم حاصل کی۔اس اسکول میں کرکٹ کی ٹریننگ اچھی طریقے سے دی جاتی تھی۔کرکٹ کھیلتے ہی وہ نظام کالج، عثمانیہ یونیورسٹی ،حیدرآباد تلنگانہ سے بیچلر آف کامرس میں گریجویٹ ہوگئے۔
اظہرنے دوشادیاں کی ہیں۔ان کی پہلی شادی نورین سے ہوئی اوردوسری شادی مشہورماڈل اوربالی ووڈ اداکارہ سنگیتابجلانی سے ہوئی ۔پہلی بیوی سے اظہرکے دوبیٹے ہوئے ۔ایک کانام اسعداوردوسرے کانام ایازتھا لیکن ایک بیٹااپنی ہی بائک سے سڑک حادثہ کاشکارہوگیا اوراس کی موت ہوگئی۔اظہراوران کی پہلی بیوی نورین کے بیچ شادی کے نوسال بعدطلاق ہوگئی۔ اظہرکی 1996میں سنگیتا بجلانی سے دوسری شادی ہوئی ۔ حالانکہ 14سال کے بعددونوں نے اپنی رضامندی سے طلاق لے لیا۔ اظہرکی تیسری شادی کی خبریں میڈیا میں آئی تھی، لیکن اظہرنے تیسری شادی کی تردیدکردی تھی۔

 

 

 

 

 

 

کرکیٹر سے سیاست کے پچ پراترے اظہر کرکٹ کی دنیامیں سب سے کامیاب کپتانوں میں جانے جاتے ہیں۔ان کی کامیابی کی وجہ سے ہی بالی ووڈ میں ان کی زندگی پرمبنی فلم ’اظہرالدین ‘ بنائی گئی تھی۔اپنے پہلے ٹسٹ سے ہی لگاتارتین سنچریاں لگا کر انہوں نے اپنے کرکٹ کریئرکی شروعات کی تھی۔یہ ہندوستانی کرکٹ ٹیم کے مڈل آرڈربلے بازتھے۔ایک کرکیٹرکے طورپروہ اپنے بیٹنگ اسٹائل کیلئے بھی جانے جاتے تھے۔ ایک مشہورکرکٹ رائٹرجان وڈکاک نے اپنے مضامین میں اظہرکی خوب تعریف کی تھی اورساتھ ہی یہ بھی کہا تھاکہ اس سے بہترین کرکٹ ڈیبیو انہوں نے کبھی نہیں دیکھا۔اس وقت بین الاقوامی کرکٹ میں صرف اور صرف محمداظہرالدین کاہی نام لیا جارہا تھا۔
محمداظہرالدین ٹیم انڈیاکے سب سے کامیاب کپتانوں میں شمارکئے جاتے ہیں۔ان کی کپتانی میں ٹیم انڈیانے کئی میچ جیتے ۔اظہرہندوستانی ٹیم میں 1990سے1999تک کپتان رہے ۔ اظہرکی کپتانی میں ہندوستانی ٹیم نے کل 47ٹیسٹ میچ کھیلے جس میں 14 میں جیت اور14میں ہارملی۔ اظہرکی کپتانی میں ٹیم انڈیانے 174ونڈے میچ کھیلے ،جس میں 90میچوں میں جیت اور74میچوں میں ہارملی۔ 1990سے 99تک اظہرہندوستانی ونڈے ٹیم کے کپتان رہے ۔اظہرکے بعد کرکیٹروسابق کول کپتان مہندرسنگھ دھونی کوسب سے کامیاب کپتانوں میں شمارکیاجاتاہے۔دھونی کی کپتانی میں اب تک ٹیم انڈیانے 191 ونڈے میچ میں 104میچ جیتے ہیں اور72میچوں میں ہارکاسامناکرناپڑا ہے۔وہیں دھونی کی کپتانی میں ٹیم انڈیانے 60ٹیسٹ میچ بھی کھیلے ، جس میں 27میں جیت اور18میچ میں ہارکاسامناکرنا پڑا۔
اظہرکوکرکٹ کی دنیامیں بہترین بلے بازکے طورپرشمارکیاجاتاہے۔ انہوں نے اپنی بلے بازی کے دم پرٹیم انڈیا کوکئی میچوں میں جیت کا تحفہ دیا۔ اظہرنے 99ٹیسٹ میچ اور 334 ونڈے میچ کھیلے ہیں۔ ٹیسٹ میچ میں اظہرنے 22سنچریوں اور21نصف سنچریوں کے ساتھ 6 ہزار 216رن بنائے ہیں، وہیں 334ونڈے میچوں میں انہوں نے 7سنچریاں اور 58 نصف سنچریوں کے ساتھ 9ہزار 378 رن بنائے۔
اظہرالدین 1985میں بنگلورمیں انگلینڈ کے خلاف بین الاقوامی کرکٹ کریئرکی شروعات کی تھی۔انہو ںنے 334ایک روزہ میچوں میں 308 پاریوں میں 54بارناباد رہے اور 36.92کی اوسط سے کل 9 ہزار 378 رن بنائے۔ان میں ناباد سب سے زیادہ اسکور 153 رہا ہے۔ اظہرالدین نے ایک روزہ میچوں میں سات سنچریوں اور58نصف سنچریاں لگائے ہیں۔انہو ںنے فرسٹ کلا س میچوں میں 51.98کی اوسط سے کل 15 ہزار 855رن بنائے ہیں۔
محمداظہرالدین کودنیاکے بہترین فیلڈروں میں بھی شمارکیا جاتا ہے۔ میدان میں اظہربہت فعال ومتحرک رہتے تھے ۔ان کے ہاتھ میں اس طرح گیندآتی تھی کہ لگتاتھاکہ ان کے ہاتھ میں چمبک ہو۔بین الاقوامی کرکٹ میں اظہرنے ٹیسٹ میچ میں 105اورونڈے میں 156کیچ لپکے۔

 

 

 

 

 

 

محمداظہرالدین کے کرکٹ کریئرمیں سب سے خراب لمحہ سال 2000میں آیا۔اسی سال ان کے اوپرمیچ فکسنگ کا الزام لگا اوربی سی سی آئی نے ان کے کرکیٹ کھیلنے پرتاعمرپابندی لگادی۔ حالانکہ 8نومبر 2012 کو آندھراپردیش ہائی کورٹ نے اظہر پرلگی تاحیات پابندی کوخارج کردیا۔ لیکن تب تک اظہر کا کرکٹ کریئرختم ہوچکاتھا۔
فکسنگ کے الزام لگنے کے بعداظہرکا کرکٹ کریئرختم ہوگیاتھا لیکن انہوں نے 2009میں کانگریس پارٹی میں شمولیت اختیارکرکے اپنے کریئرکی دوسری شروعات سیاست میں اتر کر کیا۔ اظہرنے 19فروری 2009میں کانگریس پارٹی میں شمولیت اختیارکی اور اسی سال اترپردیش کے مراد آبادسے انتخاب جیت کر پارلیمنٹ پہنچے۔
محمداظہرالدین کوان کے بہترین کھیل کے اعتراف میں ان کوکئی بڑے ایوارڈز سے نوازاگیاتھا۔ سب سے پہلے انہیں 1985میں بیسٹ انڈین کرکیٹرکا ایوارڈ ملا۔1986 میں انہیں ارجن ایوارڈ اور1988میں پدم شری سے بھی نوازاگیا اور1991میں اظہروزڈن کرکیٹرآف دی ایئرکیلئے منتخب کئے گئے۔
اظہرکی بایوپک فلم آئی لیکن باکس آفس پرکمال نہیں کرپائی۔ فلم اظہرمیں نورین کے رول میں پراچی دیسائی اورسنگیتابجلانی کے کردارمیں نرگس فاخری نے ایکٹنگ کی۔فلم کوڈائریکٹ ٹونی ڈسوجا نے کیا ۔فلم میں اظہرکی نجی زندگی اورکھیل کریئرکوبخوبی پیش کیاگیا۔فلم ’اظہر‘ میں سابق کرکیٹر محمد اظہرالدین (عمران ہاشمی)کی کہانی پرمبنی ہے جسے بچپن سے ہی نانی کی وجہ سے کرکٹ کاشوق تھا، کرکٹ ٹیم میں سلیکشن کے ساتھ ساتھ اس کی زندگی میں بیوی کے طور نورین (پراچی دیسائی )کی انٹری ہوتی ہے، اورساتھ ہی کچھ سالوں بعداداکارہ سنگیتابجلانی (نرگس فاخری) سے بھی اظہرالدین دوسرانکاح کرتاہے۔ کھیل کے ساتھ ساتھ اظہرکا نام میچ فکسنگ میں بھی آتاہے جس کی وجہ سے اس کی شہرت ومقبولیت ایک پل کیلئے ختم ہوجاتی ہے، فکسنگ معاملے میں عدالت میںکیس ہوتاہے۔دراصل ان سبھی واقعات کوفلم کے ذریعہ سے دکھانے کی کوشش کی گئی ہے۔

Share Article

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *