لاؤڈ اسپیکر کے معاملے میں دارالعلوم دیوبند کونوٹس

Daruloolum-Deoband
اترپردیش میں ہائی کورٹ کی سختی کے بعد حرکت میں آئی پولیس نے لاؤڈسپیکرز کا استعمال کرنے والے تمام مذہبی مقامات کے ذمہ داران کو اجازت طلب کرنے کے بابت نوٹس بھیجنا شروع کردیئے ہیں،اس سلسلہ میں آج دارالعلوم دیوبند کو بھی تین نوٹس جاری کئے گئے ہیں،جس پر مہتمم دارالعلوم دیوبند مفتی ابوالقاسم نعمانی نے کہاکہ وہ عدالت کے حکم کا احترام کرتے ہیں اور اس پر عمل کیا جائے گا۔ ہائی کورٹ کی سختی اور حکم کے بعد مقامی پولیس نے مندروں، مسجد، گردواروں اور دیگر عوامی مقامات پر لاؤڈسپیکرزکا استعمال کرنے والوں کو نوٹس بھیجنا شروع کردیاہے۔اس سلسلہ میں آج دارالعلوم دیوبند کو تین الگ الگ نوٹس جاری کئے گئے ،جس میں مسجد رشید،چھتہ مسجد اور دارالعلوم دیوبند کی قدیم مسجد کے نام شامل ہیں۔ اس سلسلہ میں مہتمم دارالعلوم دیوبند مفتی ابوالقاسم نعمانی نے بتایا کہ تینوں نوٹس اداروں کو موصول ہوچکے ہیں اور اجازت حاصل کرنے کا عمل شروع کردیا گیاہے۔ انہوں نے کہا کہ یہ حکم کسی حکومت کی طرف سے نہیں دیا گیا ہے بلکہ یہ عدالت کا ہے،جس کا وہ احترام کرتے ہیں،لاؤڈ اسپیکر کے سلسلہ میں جو قاعدہ قانون متعین کئے گئے ان پر عمل کیاجائے گا۔ واضح رہے کہ ہائی کورٹ کے حکم کے بعد جب حکومت نے اس سلسلہ میں کارروائی شروع کی تھی تو کچھ علماء نے اس کی مخالفت کرتے ہوئے حکومت پر مساجد اور مدرسوں کو سازش کے تحت نشانہ بنانے کا الزام لگایا تھا۔
Share Article

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *