جموں و کشمیر: پاکستان کی جانب سے گولی باری جاری

loc
جنگ بندی کی خلاف ورزی کرتے ہوئے پاکستان کی جانب سے لگاتار تیسرے دن جموں وکشمیر میں بین الاقوامی سرحد سے لگے تین ضلعوں میں گولیاں چلائی گئیں ، جس میں ایک جوان سمیت چار لوگ زخمی ہوگئے۔ بی ایس ایف کے ایک افسر نے بتایا کہ پاکستانی رینجر س نے بین الاقوامی سرحد سے لگے ہوئے گاؤں کو نشانہ بناتے ہوئے پوری رات گولی باری اور گولیاں داغیں ۔ افسر نے بتایا کہ پاکستان جان و مال کو نقصان پہنچانے کے لیے گاؤں کو نشانہ بنا رہا ہے لیکن بی ایس ایف اسے منہ توڑ جواب دے رہا ہے۔
انھوں نے بتایا کہ پرگوال سیکٹر میں بی ایس ایف کا ایک جوان اس حملے میں زخمی ہوگیا، اسے اسپتال میں بھرتی کرایا گیا ہے۔ ایک پولیس افسر نے بتایا کہ پاکستانی رینجروں نے بین الاقوامی سرحد سے لگے ارنیا، رام گڑھ،سانبا اور ہیرا نگرسیکٹر میں صبح پانچ بجے تک گولی باری کی۔ اس سے اکھنور کے کچانک سیکٹر میں دو لوگ زخمی ہوگئے اور ایک لڑکی کو بھی معمولی زخم آئے ہیں۔
انھوں نے بتایا کہ سرحد سے لگے علاقوں میں رہنے والے 8,000-9000 لوگ محفوظ جگہوں پر چلے گئے ہیں اور ان میں سے زیادہ تر لوگ اپنے رشتہ داروں کے یہاں رہ رہے ہیں۔ وہیں 1,000 سے زیادہ لوگ آر ایس پورا، سانبااور کٹھوعہ علاقوں میں بنے کیمپوں میں رہ رہے ہیں۔
گولی باری کے چلتے جموں علاقے میں کنڑول لائن (ایل او سی) اور بین الاقوامی سرحد کے نزدیک رہ رہے لوگوں میں تناؤ بنا ہوا ہے۔ انتظامیہ نے یہاں اسکولوں کو بند کرنے کے احکام د ے دیے ہیں۔ انتظامیہ کے افسران نے کہا کہ ایل او سی اور بین الاقوامی سرحد کے پانچ کلومیٹر کے دائرے میں آنے والے سبھی اسکولوں کو تین دن کے لیے بند رکھا جائے گا۔
پاکستانی فوج کے ذریعہ جمعہ کو کی گئی جنگ بندی کی خلاف ورزی میں فوج کے دو جوان شہید ہوگئے جبکہ دو مقامی لوگ بھی مارے گئے۔ دو مقامی لوگوں میں ایک خاتون اور ایک نوجوان شامل ہے۔ اس کے ساتھ ہی کئی لوگ زخمی بھی ہوئے ہیں۔ سانبا سیکٹر میں جمعہ کو بی ایس ایف کا ایک ہیڈ کانسٹبل شہید ہوگیا جبکہ راجوری ضلع میں ایل او سی پر سندر بنی سیکٹر میں فوج کا ایک جوان شہید ہوگیا۔ پاکستان رینجرس کی طر س کی گئی اندھا دھند گولی باری میں درجن بھر مویشی بھی مارے گئے۔ پاکستانی رینجرس نے جمعہ کو کٹھوعہ، سانبا اور جموں ضلع میں بی ایس ایف کی 20 سے زائد چوکیوں کو نشانہ بناکر حملہ کیا۔ بین الاقوامی سرحد پر آر ایس پورا، رام گڑھ اور سچیت گڑھ علاقوں میں جمعہ کی شام سے ہی لوگوں نے ہجرت شروع کردی ہے۔
Share Article

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *