معروف صحافی وشاعرسلیم صدیقی کاانتقال،تدفین 27جنوری کو صبح دس بجے ویلکم قبرستان میں ہوگی

saleem-siddiqui
اردو کے سینئرمعروف صحافی او رشاعر سلیم صدیقی کا آج  انتقال ہوگیا۔ان کی عمرتقریباً 55سال تھی۔ سلیم صدیقی دل کے مریض تھے ۔ کل انہیں دل کادورہ پڑا ، جس کے بعد گرو تیغ بہادر اسپتال میں داخل کرایا گیا جہاں آج شام پانچ بجے انہوں نے داعی اجل کو لبیک کہا۔ان کی تدفین 27جنوری کو صبح دس بجے ویلکم قبرستان میں ہوگی۔جنازہ بلاک نمبربی،گلی نمبر2،سیلم پور سے اٹھے گا۔پسماندگان میں دوبیٹیا ہیں اورتین سال قبل بیوی کا انتقال ہوگیاتھا اورانہیں بھی چندسال پہلے دل کادورہ پڑاتھا۔انہوں نے دہلی یونیورسٹی سے تعلیم حاصل کی اورانہوں نے اپنی صحافت کا آغاز1980کے دہائی میں دہلی سے نکل رہے روزنامہ’ فیصل ‘سے کیااوراس میں کئی سال رہنے کے بعدروزنامہ ر اشٹریہ سہارااردوسے منسلک ہوگئے اوراس میں تقریباً 15سال رہے اوردہلی کے سینئررپورٹرکے طورپرزبردست نام کمایااوراپنے پروٹنگ مہارت کیلئے جانے جاتے تھے کیونکہ مختلف سماجی، سیاسی، ملکی امور وغیرہ پر رپورٹنگ کی۔
بعدازاں انہو ں نے کچھ عرصے کیلئے روزنامہ سیاسی تقریر سے وابستہ رہے۔یہ صحافت کے علاوہ استادشاعرکی حیثیت سے جانے جاتے تھے اوردہلی وبیرون دہلی کے ادبی وشعری نشستوں رونق بخشے۔کئی مرتبہ لال قلعہ مشاعرہ میں بھی شرکت کیا۔ حال میں ان کا شعری مجموعہ بھی منظرعام پرآیاتھا۔سلیم صدیقی ایک کہنہ مشق شاعر بھی تھے ۔’تمہارے بعد‘ا ن کا مجموعہ کلام ہے ۔ جسے انہیں اپنی مرحوم اہلیہ کے نام اس شعر کے ساتھ معنون کیا ہے ۔ ’’ہزاروں آفتیں آئیں مصیبتیں ٹوٹیں*کسی کو ہم نے پکارا نہیں تمہارے بعد‘‘سلیم صدیقی کی پیدائش 3جنوری 1962 کو بریلی میں ہوئی۔ تاہم وہ ایک مدت سے دہلی میں ہی مقیم تھے ۔
Share Article

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *