ٹرمپ سے خفا ہیں برطانیہ کے لوگ

امریکی صدر ڈونالڈ ٹرمپ ماہ فروری میںبرطانیہ کے سرکاری دورے پر آنے والے ہیںلیکن ان کے دورے سے قبل برطانیہ میں کافی بے چینی پائی جارہی ہے۔ برطانیہ کے سینئر لیڈروں نے ٹرمپ کے ذریعہ کیے گئے ویڈیو ٹویٹر شیئر سے ناراض ہوتے ہوئے وزیر اعظم تھریسامے سے امریکی صدر کے سرکاری دورے کو منسوخ کرنے کو کہا تھا لیکن وزیر اعظم نے ان کے مطالبے کو تسلیم نہیں کیا اور انھوں نے ٹرمپ کے دورے کو منسوخ نہیں کیا۔ اس پر لندن کے میئر صادق خان نے ایک بار پھر امریکی صدر ٹرمپ کو تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے کہا کہ وزیر اعظم تھریسامے امریکی صدر ٹرمپ کو برطانیہ کے سرکاری دورے کی غیر دانشمندانہ دعوت کو منسوخ کریں۔

 

 

 

 

 

 

لندن کے میئر صادق خان نے امریکی صدر ڈونالڈ ٹرمپ کے برطانیہ کے مجوزہ دورے پر سخت تنقید کرتے ہوئے کہا ہے کہ برطانیہ میں ٹرمپ کو خوش آمدید نہیں کہا جائے گا۔ انھوں نے لندن کو ایک متحمل،ایک دوسرے کو قبول کرنے والا اور تنوع کا شہر قرار دیتے ہوئے کہا کہ ٹرمپ کو برطانیہ میںخوش آمدید نہیںکیا جانا چاہیے۔ دراصل وزیر اعظم تھریسامے کے ساتھ ٹویٹر پر کہا سنی ہونے کے باوجود اس بات کی اب بھی توقع ہے کہ امریکی صدر ڈونالڈ ٹرمپ فروری میںبرطانیہ کا سرکاری دورہ کریں گے۔
ان کے متوقع سرکاری دورے پر لندن کی اسمبلی نے صادق خان سے سوال کیا تھا کہ ا مریکی صدر ڈونالڈ ٹرمپ کے سرکاری دورے کے لیے مقامی حکومت نے کس طرح کی تیاریاں کی ہیں؟صادق خان نے اس کے جواب میںلکھا، ’میںایک میئر کے طور پر ہمیشہ لندن کے باشندوں کے مفاد اور تحفظ کے بارے میںبات کروں گا۔ میںنے ماضی میںبھی وزیر اعظم تھریسامے سے اپیل کی تھی کہ وہ ٹرمپ کو سرکاری دورے کی اپنی غیر دانشمدانہ دعوت کو منسوخ کردیں۔‘ لندن کے میئر صادق خان نے مزید لکھا ہے کہ ’صدر ٹرمپ کی جانب سے گھٹیا اور انتہا پسند گروپ جو ہمارے ملک میں صرف نفرت اور اختلافات کے لیے ہی اپنا وجود رکھتا ہے، ٹویٹر کو فروغ دینے کے حالیہ واقعہ سے واضح ہے کہ یہاںکسی بھی طرح ان کے سرکاری دورے کو خوش آمدید نہیں کہا جائے گا۔‘
عیاں رہے کہ امریکی صدر ڈونالڈ ٹرمپ نے گزشتہ مہینے برطانیہ کے ایک نسل پرست اور انتہا پسند سوچ رکھنے والے گروپ کے مسلم مخالف تین ویڈیوز کو ٹویٹر پر شیئر کیا تھا، جس پر برطانیہ میںکافی ہنگامہ مچا تھا اور کافی ہنگامہ آرائی ہوئی تھی۔ امریکی صدر ٹرمپ کے ذریعہ کیے گئے ان ویڈیوز کوٹویٹر شیئر کرنے پر برطانیہ کے سینئر سیاستداں بہت چراغ پا ہوئے تھے اور انھوں نے وزیر اعظم تھریسامے پر زور دیا تھا کہ امریکی صدر ڈونالڈ ٹرمپ کے سرکاری دورے کو منسوخ کردیا جائے۔ لیکن وزیر اعظم تھریسامے نے سینئر سیاستدانوں کے مطالبے کو تسلیم نہیں کیا اور نہ ہی امریکی صدر ڈونالڈ ٹرمپ کے سرکاری دورے کو منسوخ کیا۔
صادق خان نے مزید کہا ہے کہ برطانوی عوام اور میںخود امریکہ اور اس کے عوام سے محبت رکھتا ہوں لیکن ٹرمپ کا حالیہ تبصرہ نسل پرستی اور نفرت انگیزی کے خلاف برطانیہ کے موقف کے برعکس ہے،اس لیے برطانیہ میںٹرمپ کو خوش آمدید نہیںکہاجانا چاہیے۔

Share Article

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *