سعودی حکومت کا ملک میں سینما گھر کھولنے کا اعلان

cinema-hall-file-photo
سعودی عرب نے اعلان کیاہے کہ وہ ملک میں پروفیشنل سنیماگھروں تین دہائیوں سے لگے پابندی کوہٹادے گا۔ثقافت اوروزارت اطلاعات نے کہاہے کہ وہ فوری سنیماگھروں کولائسنس جاری کرناشروع کردے گا اورپہلاسنیماگھرمارچ 2018تک شروع ہونے کی امیدہے۔یہ فیصلہ سماجی اور اقتصادی صورتحال کو بہتر بنانے کیلئے ولی عہد محمد بن سلمان کے ویزن 2030 پروگرام کا حصہ ہیں۔عیاں رہے کہ شہزادے نے پچھلے دنوں ایسے کئی فیصلے لئے ہیں،جن میں خواتین کوکارچلانے کی اجازت بھی شامل ہے۔
سعودی عرب میں 1980 کی دہائی کے اوائل میں سنیما ہال بند کردیئے گئے تھے۔ ایسا اسلام پسندوں کے دباؤ میں کیا گیا تھا کیونکہ سعودی معاشرہ مذہب کے قیدوبند والے معاشرے میں تبدیل ہوگیا تھا جس میں عوامی تفریحات اور مردوں اور عورتوں کے اختلاط کی حوصلہ شکنی کی گئی۔ولی عہد محمد بن سلمان کی قیادت میں اصلاحات کے جو قدم اٹھائے گئے ہیں ان کے تحت حکومت کئی پابندیوں کو ختم کررہی ہے۔ کہا جاتا ہے کہ سعودی معیشت تیل کی قیمتوں میں کمی سے بری طرح سے متاثر ہوئی ہے۔ اسے فلمی صنعت کے فروغ سے فائدہ پہنچے گا۔ ثقافت واطلاعات کے وزیر عواد بن صالح العواد کے مطابق سنیما ہالوں کے کھلنے سے اقتصادی ترقی اور معیشت کو متنوع بنانے میں بالواسطہ مدد ملے گی۔
Share Article

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *