ہندنژاد برطانوی وزیر پریتی پٹیل کا استعفیٰ

priti-patel
برطانیہ حکومت میں ہندنژادوزیرپریتی پٹیل نے اپنی ذاتی اسرائیل دورے پرتنازعہ ہونے کے بعدعہدہ سے استعفیٰ د ے دیاہے۔اگست مہینے میں اپنے خاندان کے ساتھ چھٹیوں پراسرائیل گئیں پریتی پٹیل نے وزیراعظم بینیامن نتن یاہو اوردیگراسرائیلی افسروں سے ملاقات کی تھی۔اس کی جانکاری انہوں نے برطانیہ حکومت یااسرائیل میں برطانوی سفیرکونہیں دی تھی۔ پریتی نے تنازعہ ہونے کے بعد6نومبرکومعافی مانگ لی تھی،لیکن یہ ناکافی ثابت ہوئی اورانہیں افریقہ دورہ بیچ میں چھوڑکرملک لوٹناپڑا۔8نومبرکودیئے اپنے استعفے میں کہا ہے، ’جو کچھ میں نے کیا تھا وہ صحیح ارادے کے ساتھ کیا تھا، لیکن یہ شفافیت اور افادیت کے اعلی معیار کے مطابق نہیں تھا۔ جو کچھ ہوا اس کے لیے میں آپ سے اور حکومت سے معذرت خواہ ہوں اور استعفی دے پیش کرتے ہیں۔‘
عیاں رہے کہ مئی 2010 میں کنزرویٹیو پارٹی کی جانب سے وٹہیم سے رکنِ پارلیمان منتخب ہوئی تھیں۔جولائی 2014 سے مئی 2015 تک وزیرِ خزانہ رہیں۔اس کے بعد وہ مئی 2015 سے جولائی 2016 تک وزیرِ روزگار رہیں۔جولائی 2016 میں انھیں وزیرِ ترقی مقرر کیا گیا۔وہ طویل عرصے سے بریگزٹ کی حامی رہی ہیں اور اس بارے میں ہونے والے ریفرینڈم کے دوران خاصی سرگرم تھیں۔
Share Article

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *