مولانا ابو الکلام اور ٹیپو سلطان کو خراج عقیدت

maulana-azad
حضرت ٹیپو سلطان ٹرسٹ اورامبیڈکر نیشنل کانگریس پارٹی کے ذریعے ملک گیر سطح پر مولانا ابو الکلام آزاد اور حضرت ٹیپوسلطان کے یوم پیدائش پر پروگرام منعقد کئے گئے ۔مہاراشٹر کے صدر معین الدین انعامدار نے اس موقع پر دونوں رہنماؤں کو خراج عقیدت پیش کرتے ہوئے ان کی تصویر پر گل پوشی کی ۔اس موقع پر پارٹی کے قومی صدر نواب کاظم علی خان نے اپنے پیغام میں ملک کے تمام یونٹس کو پیغام ارسال کی جس میں انہوں نے کہاکہ آج “مولانا ابو الکلام آزاد” کا یومِ پیدائش ہے۔ یہ دن ہمارے ملک میں “قومی یومِ تعلیم” کے طور پر منایا جاتا ہے۔ مولانا ابو الکلام آزاد ہندوستان کی ایک حساس شخصیت تھی۔ مولانا آزاد جہاں ہندوستا نی سیاست میں صف اول کے لوگوں میں قیادت کے منصب پر فائزتھے۔وہیں مسلمانوں کے لئے انتہائی فکر مند رہتے تھے۔
ٹیپو سلطان کو خراج عقیدت پیش کرتے ہوئے نواب کاظم علی خان نے کہا کہ ٹیپوسلطان نے اپنی پوری توجہ اتحاد بین المسلمین اور اتحاد بین الاقوام ہند پر مرکوز کی تو دوسری جانب ملک کی صنعت و حرفت پر بھرپور توجہ دی۔ سلطان کے یہی عزائم و ارادے تھے جنہوں نے صلیبی ایسٹ انڈیا کمپنی کو اس مسلم سلطان کا مخالف بنا دیا اور اسی مخالفت نے اس کو تمام عمر جنگوں میں مصروف رکھا۔ مگر باوجود اس کے سلطنتِ خداداد میسور نے صنعت و حرفت اور دیگر فنون میں جو ترقی کی وہ میسور کو کبھی دوبارہ حاصل نہ ہوسکی۔ٹیپو سلطان نے یہ محسوس کرلیاتھا کہ یوروپ کے انقلاب کی بدولت انگریزوں کے پاس جدیدترین اسلحہ اورجنگی ساز وسامان موجود ہیں۔ اس کا مقابلہ پرانے اور فرسودہ جنگی آلات سے نہیں کیا جاسکتا۔اس لئے اس نے بڑے پیمانے پر نئی تکنیک استعمال کرکے جنگی ساز وسامان تیار کروائے۔ اس نے نہ صرف پیدل افواج اور گھوڑسواروں پر خصوصی دھیان دیا بلکہ بحریہ کو بے انتہا مضبوط اور جدیدترین بنایا۔ بحریہ کاقیام ٹیپوسلطان کاایک عظیم کارنا مہ ہے۔ وہ ہندستان کا پہلا حکمران تھا۔ جس نے سمندری راستوں کی اہمیت کااحساس کیا اور اس کا باضابطہ انتظام کیامسلم مورخ سچ لکھتا ہے کہ حضرت اقبال کے مردِ مومن کو اگر مجسم حالت میں دیکھنا مقصود ہو تو ٹیپو سلطان شہید اس کا بہترین نمونہ ہے۔ ٹیپو سلطان تاریخ اسلام کا وہ لازوال کردار ہے جس پر عالم اسلام تا قیامت نازاں رہے گا۔تاریخ عالم شاید ہی اس جری و اولوالعزم مسلم سلطان کی کوئی مثال یا نظیر پیش کر سکے گی۔ایک جری سپاہی اور بہترین سپہ سالار اور ایک بہترین حاکم و منتظم بھی۔سلطان ٹیپو کو اس دنیا سے رْخصت ہوئے تقریبا دو سو بارہ سال بیت چکے ہیں لیکن سلطان ٹیپو کی عظمت کاثبوت یہ ہے کہ اب بھی اس کا نام لوگوں کے دلوں پر لکھا ہواہے۔
Share Article

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *