تبو اب مزاحیہ کردار میں بھی جلوہ گر ہوں گی

مشہور اداکارہ شبانہ اعظمی کی بھتیجی تبسم ہاشمی عرف تبو 4 نومبر1970 کو حیدرآباد میں پیدا ہوئیں۔1983 میں اعلیٰ تعلیم کے لئے ممبئی منتقل ہوگئیں اور اپنی بہن فرح ناز کے نقش قدم پر چلتے ہوئے فلم انڈسٹری میں قدم رکھا۔ تبو نے 15سال کی عمر میں فلم ’ہم نوجوان‘ میں مختصر سے کردار کے ساتھ کیرئیر کا آغاز کیا۔ پہلی بار تبو نے بونی کپور کی فلم ’پریم‘ میں سنجے کپور کے ساتھ مرکزی کردار ادا کیا اور بہت جلد اپنی شاندار اداکاری کی بدولت انڈسٹری پر چھا گئیں۔
اجے دیوگن کے ساتھ فلم ’وجے پتھ‘ میں بے مثال اداکاری پر تبو کو فلم فیئر ایوارڈ بھی دیا گیا۔ تبو کی دیگر یادگار فلموں میں ’ساجن چلے سسرال‘ ’جیت‘، بارڈر، وراثت، بیوی نمبر ون، ہم ساتھ ساتھ ہیں، ہیرا پھیری، چینی کم، بندہ یہ بنداس ہے، رانا اور حیدر شامل ہیں۔ ماچس، وراثت اور چاندنی بار کو بھی تبو نے اپنی متاثر کن اداکاری سے مقبول بنایا اور ہندوستان کے چوتھے بڑے سویلین اعزاز پدما شری سمیت کئی اعزازات پائے۔
تبو منتخب فلموں میں ہی کام کرتی ہیں اورانہوں نے اپنے کیرئیرمیں زیادہ تر سنجیدہ کردار ہی ادا کیے ہیں، لہٰذا تبو کو مزاحیہ کردار میں دیکھنے کے لیے ان کے مداح شدیدبے چین ہیں، اپنے مداحوں کی خواہش کومدنظررکھتے ہوئے تبو نےروہت شیٹھی کی مزاحیہ فلم ’’گول مال4‘‘کا حصہ بننے کی حامی بھری ہے۔ ’’گول مال4‘‘ روہت شیٹھی کی مزاحیہ فلم سیریز ’’گول مال‘‘ کا چوتھا حصہ ہے، اس سے قبل ریلیز کی گئیں پہلی تینوں فلموں نے باکس آفس پر شاندار بزنس کیا تھا، لہٰذا اپنی چوتھی فلم کو پہلی تینوں فلموں سے مختلف بنانے کے لیے روہت شیٹھی نے اداکارہ تبو کو فلم میں کاسٹ کیا ہے۔
تبو نے فلم میں اپنے کردار کے حوالے سے بات کرتے ہوئے کہا کہ انہوں نے کیرئیر میں زیادہ تر سنجیدہ کردار ہی اداکیے ہیں، ان کے مداح ان سے پوچھتے ہیں کہ وہ مزاحیہ فلموں میں کام کیوں نہیں کرتیں؟ ان ہی باتوں کے پیش نظر لہٰذا مداحوں کی خواہش کے مطابق تبو نے ’’گول مال 4‘‘ سائن کی تاہم ان کا کہنا ہے کہ مزاحیہ ہونے کے باوجود فلم میں ان کا کردارسنجیدہ نوعیت کا ہے۔

 

 

 

 

 

فلموں میں کم کام کرنے سے متعلق اداکارہ کا کہنا تھا کہ میرے دور کی بہت کم اداکارائیں ہیں جو فلموں میں کام کررہی ہیں ، کم سے کم میں سال میں ایک فلم تو کررہی ہوں۔ فلم میں تبو کے مدمقابل اداکار اجے دیوگن مرکزی کردار ادا کررہے ہیں،اجے کے ساتھ کام کرنے کے حوالے سے تبو نے بات کرتے ہوئے کہا میرا اور اجے دیوگن کا رشتہ بہت خاص ہے، ہم نے کئی فلموں میں ایک ساتھ کام کیا ہے لہٰذا مجھے ان کے ساتھ کام کرکے بہت خوشی محسوس ہوتی ہے۔
واضح رہے کہ اس سے قبل بھی ایک انٹرویو کے دوران تبو نے شادی نہ کرنے کی وجہ اجے دیوگن کو قرار دیتےہوئے کہا تھا کہ میرے قریب آنے والے ہر لڑکے کو اجے دیوگن مارتے اور دھمکاتے تھے یہی وجہ ہے کہ آج تک کوئی لڑکا میرے قریب نہیں آیا۔
1996 میںتبو کی آٹھ فلمیںریلیز ہوئیں۔ ان میںسے دو فلمیں’ساجن چلے سسرال‘ اور’ جیت‘ کافی کامیاب رہیں۔ دونوں نے ہی اس سال کی ٹاپ پانچ فلموںمیں جگہ بنالی۔ان کی اہم فلم’ ماچس‘کافی سراہی گئی تھی۔ اس فلم میں سکھ دہشت گردی کے عروج کے دوران پکڑی جانے والی پنجابی خاتون کے ان کے رول کی بڑی ستائش ہوئی اور انھیں بہترین اداکارہ کا اپنا پہلا قومی فلم ایوارڈ ملا۔
1997میںریلیز ہونے والی ان کی پہلی فلم ’بارڈر‘ تھی۔ یہ فلم 1997 کی ہند- پاک جنگ میںلونگے والا کی لڑائی سے جڑی زندگی کے سچے واقعات کے بارے میںتھی۔ انھوں نے اس فلم میںسنی دیول کی بیوی کا رول نبھایا تھا۔ ان کا رول اس فلم میں چھوٹا تھا لیکن یہ فلم 1997 کی سب سے بڑی ہٹ رہی ۔ اسی سال انھوںنے مبصرین کے ذریعہ سراہی گئی فلم ’وراثت‘ میںبھی کردار نبھایا۔یہ فلم باکس آفس پر کامیاب رہی۔ تبو کو اپنی اداکاری کے لیے’ فلم فیئر سمیکشک ایوارڈ‘ ملا۔
1999 میں انھوں نے دو کامیاب ملٹی اسٹار فلموں ’بیوی نمبر 1‘اور ’ہم ساتھ ساتھ ہیں‘ میںاداکاری کی۔ یہ دونوںفلمیںاس سال کی بالترتیب پہلی اور دوسری سب سے بڑی ہٹ فلمیںرہیں۔ 2000 میںانھوںنے فلم ’ہیرا پھیری‘ اور فلم ’استتو‘ میںاداکاری کی۔ ان میںسے پہلی فلم باکس آفس پر کافی ہٹ رہی، جبکہ دوسری فلم مبصرین کے ذریعہ سراہی گئی۔ انھیںفلم ’استتو‘کے لیے بہترین اداکاری کا تیسرا’ فلم فیئر سمیکشک ایوارڈ‘ ملا۔
2001 میںانھیںمدھر بھنڈارکر کی ہدایت کی گئی فلم ’چاندنی بار‘ میں دیکھا گیا۔ ایک بار ڈانسر کے ان رول کو ایک سرے سے سبھی نے سراہا اوراپنی اداکاری کے لیے انھوں نے بہترین اداکارہ کا اپنا دوسرا نیشنل فلم ایوارڈ جیتا۔ مبصرترن آدرش کے الفاظ میں’’چاندنی بار پوری طرح سے تبو کی فلم ہے اور اس میں کوئی دو رائے نہیںکہ ان کی اداکاری سب سے زیادہ نمبروں او رسبھی ایوارڈوں کی حقدار ہے۔ ان کا کام بے نقص ہے اور ان کے کردار کا جواثر شائقین کے دل و دماغ پر پڑتا ہے، وہ ان کے کیریکٹر روٹیشن کی صلاحیت کے سبب ہی ہے۔ ایک دوسرے مبصر کے مطابق’ اگر کوئی اداکارہ پوری فلم کو اپنے کاندھوں پر اٹھا سکتی ہے، تو وہ ہے تبو۔ ہمیشہ کی طرح وہ اپنے کردار میںنکھر اٹھتی ہیں۔‘

 

 

 

 

 

انہوںنے کئی تیلگو فلموںمیں بھی کام کیا ہے، جن میںسے بہت سی تو کافی کامیاب فلمیں تھیں۔ مثال کے طور پر ’قلی نمبر 1‘ اور فلم ’ننّے پیلادتتھا‘۔ ان میںسے دوسری فلم تو ان کی سب سے زیادہ مشہور فلموں میں سے ایک ہے۔
2003 میںتبو نے ولیم شیکسپیئر کی میک بیتھ پر مبنی ایک فلم میںاداکاری کی۔ اس میں اس اداکارہ نے لیڈی میک بیتھ کے کردار پر مبنی ’نمی‘ کا کردار نبھایا۔’ مقبول‘ نام کی اس فلم کا ڈائریکشن وشال بھاردواج نے کیا تھا اور اسے 2003 میںٹورنٹو انٹرنیشنل فلم فیسٹول میںپیش کیا گیا ۔ یوںتو فلم ’مقبول ‘ باکس آفس پر ناکام رہی لیکن اس کی بھرپور پذیرائی ہوئی۔ اس میںتبو کی اداکاری کی بہت ستائش کی گئی۔ تبصرہ نگار رانی اہلووالیا کے مطابق ’تبو ایک سیاہ کردار میںبھی چمکتی ہیں۔ بالی ووڈ کی سب سے ورسٹائل ایکٹریس ویلن کا کردار ایسے نبھاتی ہیں جیسے وہ ان کے مزاج کے حصہ ہو۔ یہ اپنے چہرے پر معصوم احساس رکھتی ہیں، جس سے وہ اپنے کردار میںکہیںزیادہ گھناؤنی بن جاتی ہیں۔ ان کا طعنے مارنے کا انداز ان کے کردار کے حساب سے بالکل درست ہے۔ ایک تبصرہ نگار نے کہا’’تبو ایک پیچیدہ کردار میںنظر آئیں۔ اس فلم میںان کی اداکاری ایوارڈ کے لائق ہے۔فلم’ چاندنی بار ‘ کے بعد یہ ایسا دوسرا کردار ہے، جس کے لیے انھیں طویل عرصہ تک یاد کیا جائے گا۔
وجے پتھ سے ہندی فلموں میں اپنے کیریئر کا آغاز کرنے والی سنجیدہ اداکارہ تبو کا دو دہائیوں سے زیادہ طویل فلمی کیریئر ہے۔ لیکن وہ کام کے پیچھے بھاگنے والی اداکاراؤں میں سے نہیں ہیں۔
تبو کا کہنا ہے کہ جب وہ سنجیدہ کردار ادا کرتی ہیں تو ان کے مداح ان سے پوچھتے ہیں کہ وہ مزاحیہ فلموں کا حصہ کیوں نہیں بن رہیں اور مزاحیہ فلموں میں کام کرنے پر سنجیدہ کردار کی توقع رکھتے ہیں۔ تبو سمجھتی ہیں کہ ناظرین کوکبھی خوش نہیں رکھا جا سکتا، لہٰذا وہ صرف اپنے دل کی بات سن کر فلموں کا انتخاب کرتی ہیں۔
فلموں میں کم کام کرنے کے سوال پر تبو نے کہا کہ ‘میرے دور کی کتنی اداکارائیں ہیں جو فلموں میں کام کر رہی ہیں؟ میں سال میں ایک فلم تو کر رہی ہوں۔’گول مال 4‘ میں تبو اپنے خاص دوست اجے دیوگن کے ساتھ نظر آئیں گی۔ انہوں نے کہا کہ ان کا اور اجے دیوگن کا ایک خاص رشتہ ہے۔ تبو کے مطابق اجے دیوگن اور انہوں نے کریئر کے ہر پڑاؤ پر ایک ساتھ کام کیا ہے اس لیے انہیں اجے دیوگن کے ساتھ کام کرنے میں سہولت رہتی ہے۔
تبو اپنے فلمی کریئر میں امیتابھ بچن کے ساتھ رومانوی فلم ’چینی کم‘ کو سنگ میل سمجھتی ہیں کیونکہ ان کے مطابق اس فلم کے بعد ایسی جوڑیاں بننی شروع ہوئیں جس میں عمر کا فرق آدھا تھا اور جو ذرا ‘ہٹ کر تھیں۔اپنے 20 سال کے فلمی کریئر میں تبو نے کئی اتار چڑھاؤ دیکھے ہیں لیکن انہوں نے طے کیا ہے کہ وہ کبھی آپ بیتی نہیں لکھیں گی۔
روہت شیٹھی کی ہدایت کاری میں بنائی جانے والی گول مال 4 میں تبو کے علاوہ اجے دیوگن، ارشد وارثی، پرینیتی چوپڑا، تشار کپور اور کنال کھیمیو بھی شامل ہیں۔ گذشتہ چند برسوں میں تبو نے فلموں میں جس طرح کی اداکاری کی ہے اس کی کافی تعریف ہوئی ہے۔

Share Article

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *