جمعیت اہل حدیث کابہاروآسام کے سیلاب متاثرہ علاقوں میں راحت رسانی کاکام جاری

flood-relief
مرکزی جمعیت اہل حدیث ہند کے زیراہتمام اول یوم سے بہار ،بنگال ،آسام ، اترپردیش وغیرہ کے سیلاب متاثرین کے مابین راحت رسانی کا عمل جاری ہے اور بہاروآسام میں راحت رسانی کا دوسرا مرحلہ مکمل کیا جاچکا ہے۔اورجزوی طورپر گھروں کی مرمت اورتعمیر کا کام جاری ہے۔
حالیہ دنوں بہار کے سیمانچل کے اضلاع خصوصاًکٹیہار، پورنیہ، ارریہ وکشن گنج وغیرہ میں مرکزی جمعیت اہل حدیث ہند کے زیراہتمام اور صوبائی جمعیت اہل حدیث بہار کے زیر نگرانی راحت رسانی کا دوسرا مرحلہ مکمل ہواہے ۔اس مرحلہ میں مذکورہ اضلاع کے ببھنی،چکنی، کوچیاہی، لابھابنگروا،بیدا، کولہان،گوری پور،لال گنج،مالتی پور،سیکورنا ،بسنت پور،منجھلی، مہاراجپور،گاچھپارا، ہرواڈنگا،چھ گھڑیا،بھوما،سالکی، چقندرا، بٹراہا، سکٹیا، ڈوباٹولہ، ڈومریا، بھلواوغیرہ مقامات کے ہزاروں کنبوں تک خوردنی اشیاء پہنچائی گئی ۔
ان مقامات پر ضلعی جمعیات اہل حدیث کے ذمہ داران نے بڑی محنت ومشقت سے راحت رسانی کے کام کو انجام دیا۔راحتی قافلے میں صوبائی جمعیت اہل حدیث بہار کے ناظم مولانا انعام الحق مدنی، ضلعی جمعیت اہل حدیث کٹیہارکے ناظم ڈاکٹر رحمت اللہ سلفی ،نائب امیر ضلعی جمعیت اہل حدیث کٹیہارمولانا محمدحسن سلفی،نائب ناظم ضلعی جمعیت اہل حدیث کٹیہارمولانا مشتاق احمد ندوی ، کٹیہارمشرقی زونل کمیٹی کے ناظم مولانا مطیع الرحمن محمدی، نائب ناظم مولانا تفضل الحق محمدی، مقامی جمعیت اہل حدیث بسنت پورپورنیہ کے امیرمولانا ابوشمع سنابلی، شمیم اختر ،مسعود عالم،ناظم ضلعی جمعیت اہل حدیث ارریہ مولانا نذرالابرارمدنی،نائب ناظم ضلعی جمعیت اہل حدیث ارریہ مولانا عبدالرحیم ندوی، حافظ صالح مدنی، ضلعی جمعیت ا ہل حدیث کشن گنج کے امیر مولانا احمدحسین قاسمی،ضلعی جمعیت اہل حدیث کشن گنج کے ناظم مولانا اخلاق احمدندوی ،نائب امیر مولانا سلیمان ودیگر ذمہ داران واراکین ضلعی جمعیات شریک رہے۔
اسی طرح آسام کے متعدداضلاع مثلا گولپاڑا،بارپیٹا،ماری گاؤں وغیرہ میں صوبائی جمعیت اہل حدیث آسام کے امیر مولانا مقصودالرحمن مدنی ناظم پروفیسر عبدالسلام ودیگر ذمہ داران کی نگرانی میں راحت رسانی کا دوسرا مرحلہ مکمل ہوا۔ان علاقوں میں جزوی طورپر گھروں کی مرمت اور تعمیر کا کام جاری ہے۔اور آئندہ تیارشدہ پلان کے مطابق متاثرین کی بازآبادکاری ومکانات کی تعمیرات کاکام شروع ہونے والاہے۔
Share Article

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *