اخلاق سانحہ کے خاص ملزم کو ضمانت سے پورا خاندان پریشان

بیسرا داداری کے 2015میں پیٹ پیٹ کر بے دردی سے ہلاک کئے گئے محمد اخلاق کے بیٹے دانش نے 31جولائی کو الہ آباد ہائی کورت کے ذریعے متعلق مقدمہ کے خاص ملزم وثال رانا جو کہ مقامی بی جے پی لیڈر سنجے رانا کے بیٹے ہیں کو ضامنت دئے جانے پر سخت افسوس اور حیرت کا اظہار کیا ہے۔ انہوں نے چوتھی دنیا سے کہا کہ ہم لوگ گزشتہ دو سال سے انصاف کے منتظر ہیں مگر یہ لوگ بااثر لوگ ہیں۔ لہٰذا خاص ملزم وثال رانا کو ضمانت ملی ہے۔
دانس نے مزید کہا کہ وہ اس سانحہ میں خود بری طرح مجروح ہوا تھا اوران کا خاندان ابھی تک اس حملہ کے خوف و دہشت سے باہر نہیں نکلا ہے۔ وثال راناخاص ملزم تھے۔ ان کی ضمانت کبھی قابل قبول نہیں ہوسکتی ہے مگر ہم لوگ مجبور ہیں کیا کریں؟اس سلسلے میں ہم وزیرداخلہ راجناتھ سنگھ سے گزشتہ ماہ جولائی کے اوائیل میں ملے تھے اور ملزم کے خلاف کچھ ایکشن کی توقع کررہے تھے۔ اس ضمانت سے پورے خاندان کے بے حدک رنج ہوا ہے۔
واضح رہے کہ اخلاق کی ماں بیوی اور بڑی بیٹی نے بیسرا کے 10باشندوں کے نام پولس کو تحریری طورپر دیئے تھے۔ اخلاق کی چھوٹی بیٹی شائستہ اور دانش کے ذریعے مجسٹریٹ کے سامنے دیئے گئے بیان میں 9مزید نام ملزمین کی فہرست میں جوڑے گئے۔ اپریل 2017میں دو ملزمین کو ضمانت دی جاچکی ہے۔ جب کہ تین کم سنوں کو گزشتہ برس ضمانت دی گئی ہے۔ بہرحال خاص ملزم وثال رانا کو دی گئی ضمانت سے مقتول اخلاق کا پورا خاندان بہت پریشان ہے کیونکہ اس کی نظر میں دھیرے دھیرے پورا کمزور ہوتاجارہاہے۔

Share Article

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *