شاہین باغ کی گلیاں دلی سرکار کی پول کھول رہی ہیں

نئی دہلی: سنٹرل یونیورسٹی جامعہ ملیہ اسلامیہ کے قرب میں آباد شاہین باغ کی گلیاں بارش ہوتے ہی پانی سے بھر جاتی ہیں ،آمد و رفت بند ہوجاتا ہے لیکن شاہین باغ کی ایک گلی ایسی بھی ہے جس میں تقریباً ایک سال سے پانی بھرا ہوا ہےلیکن علاقے کے کسی بھی نمائندہ کے کان پر جوں نہیں رینکتا ،شاہین باغ کے طیب مسجد کے پاس سی بلاک کی گلیاں سال بھر سے نہایت ہی افسوس ناک حالت میں ہے ان دنوں بارش کی وجہ سےاس گلی کے لوگوں کا نکلنا بے حد مشکل ہو چکا ہے ،گھر سے نکلنے کے بعد کپڑے بدلنا مجبوری بن جاتی ہے ،نمازیوں کا گھر سے نکلنا مشکل ہے ،لوگ گھروں میں نماز پڑھنے پر مجبور ہیں ،اس حوالے سے کئی بار علاقے کے نمائندے سے ملاقات کی جاچکی ہے،تاہم ایک سال سے علاقے کے رکن اسمبلی امانت اللہ خان کی یقین دہانی جاری ہے جبکہ حالات ناگفتہ بہ ہوچکی ہے،آج یہاں کے لوگوں کا غصہ اس وقت پھوٹ پڑا جب بارش کے بعد پانی لوگوں کے گھروں میں گھسنا شروع ہوا۔

 

گلیوں میں لوگ جمع ہوکر علاقے کے نمائندوں کی خلاف نعرے بازی کی،کانگریس کے لیڈر ماسٹر محمد انصار نےکہا کہ علاقے کے لوگ کافی پریشان ہیں اس لئے لوگ گھروں کے باہر نکل کر احتجاج کرنے پر مجبور ہیں انہوں نے کہا کہ یہ کوئی آج کا معاملہ نہیں ہے بلکہ رمضان کے مہینے میں تو گلی سے گھروں میں آنے والی بدبو کی وجہ سے کافی لوگ روزہ نہیں رکھ پائے تھے، انہوں نے یہاں کے کونسلر پر عدم توجہئ کا الزام عائد کرتے ہوئے کہا کہ کبھی بینکاک تو کبھی نینی تال میں گھوم رہے ہیں جب کہ عوام پریشان حال ہے۔ یہاں کے بھولی بھالی عوام خستہ حال سڑک ، پانی ، بجلی ، سیور لائن اور سڑک جام کے مسائل سے ہمیشہ ہی پریشان رہتے ہیں، جس سے وہ کافی حد تک عادی بھی ہوچکے ہیں ۔ مقامی لوگوں کا الزام ہے کہ علاقے کے موجودہ ممبر اسمبلی کو عوامی مسائل سے کوئی خاص دلچسپی نہیں ہے جس کی وجہ سے آج کل یہاں کی مشکلات میں کافی اضافہ ہوگیا ہے۔

Share Article

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *