چینی فوج پاکستان کے راستے بھی کشمیر میں گھس سکتی ہے

چین کے ایک تھنک ٹینک نے کہا ہے کہ جس طرح بھوٹان کی جانب سے سکم سیکٹر کے ڈوكلام علاقے میں سڑک کی تعمیر سے چینی فوج کو ہندوستانی فوج نے روکا، اسی منطق کا استعمال کرتے ہوئے پاکستان کے اصرار پر کشمیر میں تیسرے ملک کی فوج گھس سکتی ہے۔ چائنا ویسٹ نارمل یونیورسٹی میں ہندوستانی مطالعہ مرکز کے ڈائریکٹر لانگ جنگچن نے ایک اخبار میں لکھے اپنے مضمون میں کہا ہے، ‘اگر ہندوستان سے بھوٹان کے علاقے کو بچانے کی اپیل کی بھی جاتی ہے تو یہ اس کے آباد علاقے تک ہو سکتا ہے، متنازعہ علاقے کے لئے نہیں۔

 

مضمون میں کہا گیا ہے، ‘ورنہ، ہندوستان کی منطق کے مطابق اگر پاکستان حکومت درخواست کرے تو تیسرے ملک کی فوج ہندوستان کے زیر کنٹرول کشمیر سمیت ہندوستان اور پاکستان کے درمیان متنازعہ علاقے میں گھس سکتی ہے۔
چین کے سرکاری میڈیا نے ڈوكلام تکرار پر ہندوستان کی تنقید کرتے ہوئے کئی مضمون شائع کئے ہیں۔ لیکن پہلی بار تناظر میں پاکستان اور کشمیر کو لایا گیا ہے۔ ہندوستان کی وزارت خارجہ کی جانب سے 30 جون کو جاری بیان کا ذکر کرتے ہوئے اس میں کہا گیا ہے، ‘ ہندوستانی فوجی بھوٹان کی مدد کے نام پر چین کے ڈوكلام علاقے میں داخل ہوئی لیکن مداخلت کا مقصد بھوٹان کا استعمال کرتے ہوئے ہندوستان کی مدد کرنا ہے۔

Share Article

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *