کپل مشرا نے اروند کیجریوال کو چوتھا خط لکھا

kapil_mishra_shot_3دہلی کے سابق وزیر کپل مشرا نے وزیر اعلی اروند کیجریوال پر حملہ جاری رکھتے ہوئے انہیں چوتھا خط لکھا ہے اور کہا ہے کہ وہ اتوار کو ایک اور بڑا انکشاف کریں گے۔ كراول نگر اسمبلی سیٹ سے ممبر اسمبلی مسٹر مشرا نے آپ لیڈروں کے بیرونی دورے کی معلومات عام کرنے کا مطالبہ لے کر گزشتہ چار دنوں سے بھوک ہڑتال پر بیٹھے ہیں۔ مسٹر مشرا نے ٹویٹ کیا، “ستیہ گرہ کا آج چوتھا دن ہے۔ غیرملکی دورے سے توجہ ہٹانے کے لئے آج آپ (کیجریوال) کون سا نیا ڈرامہ کریں گے۔ ” مسٹر مشرا نے اس خط میں کل ایک بڑا انکشاف کرنے کی دھمکی دی ہے۔ ساتھ ہی انہوں نے پارٹی کے براڑی سے رکن اسمبلی سنجیو جھا کی جانب سے بھوک ہڑتال کی مخالفت میں بھوک ہڑتال پر بیٹھنے کے فیصلے کا ذکر کیا ہے۔ انہوں نے لکھا کہ مسٹر جھا ابھی کیجریوال پر فریفتہ ہیں لیکن ایک دن ان کی آنکھ سے بھی پردہ ہٹ جائے گا۔
اس سے قبل مسٹر جھا نے مسٹر مشرا کے خلاف بھوک ہڑتال کرنے کی بات کہی تھی۔ مسٹر جھا نے ٹویٹ کیا ہے، “مسٹرکپل مشرا کا جھوٹ کے خلاف ستیہ گرہ ۔ اب میں بھی بھوک ہڑتال شروع کروں گا ۔ ” مسٹر مشرا نے ایک اورٹویٹ میں کہا، “مسٹرسنجیو جھا کوخوش آمدید۔ آپ بھی کیجریوال کی اسی اندھی عقیدت میں مگن ہیں جس میں چند دنوں قبل میں خود تھا۔ خدا آپ کو عقل سلیم سے نوازے “۔
مسٹر مشرا نے کہا، “سنجیو میرے بھائی ہیں۔ آپ پر فریفتہ ہیں ۔ ایک دن ان کی آنکھوں سے بھی پردہ ہٹ جائے گا۔ شاید کل ہی یہ پردہ ہٹ جائے۔ کل جو حقیقت میں ملک کے سامنے رکھوں گا وہ سارے ملک کو یہ بتائے گا کہ آپ ان غیر ملکی دوروں کی معلومات فراہم کرنے سے کیوں بچ رہے ہیں۔ ” سابق وزیر نے کہا، “میں پولیس سے ان لوگوں سے سنجیو کو مکمل تحفظ فراہم کرنے کی اپیل کرتا ہوں جنہوں نے میرے اوپر حملہ کرایا تھا۔ وہ لوگ مجھے غلط ثابت کرنے کے لئے کسی بھی حد تک جا سکتے ہیں۔ ” مسٹر مشرا کا کہنا ہے کہ جب تک آپ آشیش کھیتان، ستیندر جین، درگیش پاٹك، سنجے سنگھ اور راگھو چڈھا کے غیر ملکی دوروں کی معلومات عام نہیں کرتے اس وقت تک ان کا ‘ستیہ گرہ’ جاری رہے گا۔ قابل ذکر ہے کہ مسٹر مشرا کو گزشتہ چھ مئی کو دہلی کے آبی اور وزیر سیاحت کے عہدے سے ہٹا دیا گیا تھا۔ انہوں نے مسٹر کیجریوال پر وزیر صحت ستیندر جین سے دو کروڑ روپے کی رشوت لینے کا الزام لگایا تھا۔

Share Article

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *