آئی ایس آئی کے جاسوسی نیٹ ورک کا پردہ فاش، حوالہ کے ذریع ہوتا تھا فنڈ سپلائی

نئی دہلی: یو پی اور مہاراشٹر میں پاکستانی خفیہ ایجنسی آئی ایس آئی کی خوفناک سازش کا پردہ فاش ہوا ہے۔ یو پی اے ٹی ایس نے فیض آباد اور ممبئی سے دو پاکستانی جاسوسوں کو گرفتار کیا ہےPak-SPY۔ ان سے پوچھ تاچھ میں پتہ چلا ہے کہ پاکستان سے حوالہ کے ذریعہ پیسوں کی سپلائی کی جاتی تھی۔ دونوں جاسوس ہندوستان میں پاکستان ہائی کمیشن کے ایک افسر کے رابطہ میں تھے۔
یو پی اے ٹی ایس اور فوج کی خفیہ یونٹ نے مشترکہ کارروائی میں یو پی کے فیض آباد سے آفتاب علی کو پکڑا ہے۔ اس جاسوس نے پاکستان میں جا کر آئی ایس آئی سے ٹریننگ لی تھی۔ اس کے پاس سے مشتبہ کاغذات ، کینٹ ایریا کا نقشہ، دہشت گردانہ لٹریچر اور کئی خطوط برآمد ہوئے ہیں۔ اس کے ساتھ ہی اس کے ممبئی سے آفتاب علی کا فائنانسر بھی پکڑا گیا ہے۔
مہاراشٹر اور یو پی اے ٹی ایس کی ٹیم نے ایک مشترکہ آپریشن میں الطاف قریشی کو گرفتار کیا۔ اس کے پاس سے70لاکھ روپے برآمد بھی کئے گئے ہیں۔ وہ آئی ایس آئی کے کہنے پر فیض آباد سے پکڑے گئے ایجنٹ آفتاب کے کھاتے میں پیسہ جمع کرتا تھا۔ دونوں جاسوس پاک ہائی کمیشن کے ایک افسر کے رابطہ میں تھے۔
آفتاب علی کے اہل خانہ نے صفائی میں کہا ہے کہ پاکستان میں اس کی نانی رہتی ہیں، اس لئے وہ وہاں جایا کرتا تھا۔ یو پی اے ٹی ایس کے آئی جی اسیم ارون نے بتایا کہ آفتاب علی نے پاکستان جا کر آئی ایس آئی سے جاسوسی کی ٹریننگ لی ہے۔ یو پی اے ٹی ایس کے آفتاب کے خلاف پختہ ثبوت ہیں۔ اس کے موبائل میں کینٹ ایریا کا نقشہ موجود ہے۔

Share Article

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *