شمالی کوریا کے خلاف سی آئی اے نے بدلی اپنی حکمت عملی

CIA-on-North-Koreaواشنگٹن؍سیول: جنوبی کوریا کے صدارتی انتخابات میں شمالی کوریائی پناہ گزیں کے بیٹے مون جے ان کی جیت کے بعد ٹینشن میں آئے امریکہ نے کوریائی خطہ میں اپنی حکمت عملی بدل دی ہے۔ شمالی کوریا کے تاناشاہ کم جونگ ان کے قتل کی کوشش کر چکی امریکی خفیہ ایجنسی سی آئی اے نے کوریا مشن سینٹر کا قیام کیا ہے تاکہ وہ شمالی کوریا کے خلاف اپنی پوری طاقت اور وسائل کا استعمال کر سکے۔ دلچسپ بات یہ ہے کہ سی آئی اے نے اپنے اس سینٹر کی کمان سب سے تجربہ کار افسر کو دی ہے تاکہ شمالی کوریا کے خلاف بہتر حکمت عملی بنائی جا سکے۔
جنوبی کوریا میں شمالی کوریائی پناہ گزیں کے بیٹے مون کی جیت کے بعد امریکہ کا یہ قدم سامنے آیا ہے، جو شمالی کوریا کے خلاف امریکہ کی فکر کو نمایاں کرتا ہے۔ دراصل، امریکہ ہر حال میں شمالی کوریا کو مذاکرات کی بنچ پر لانا چاہتا ہے اور اس کے ایٹمی پروگرام کو بند کروانا چاہتا ہے لیکن شمالی کوریا کسی بھی قیمت پر جھکنے کو تیار نہیں ہے۔ شمالی کوریا امریکہ کو انتباہ دے چکا ہے کہ اگر اس نے اس کو اکسایا تو وہ ایٹمی حملہ کرے گا۔ اس کے علاوہ شمالی کوریا نے تاناشاہ کم جونگ ان کے قتل کے معاملہ میں امریکہ کو سبق سکھانے کی ٹھان رکھی ہے۔ دراصل، حال ہی میں شمالی کوریا نے سی آئی اے پر تاناشاہ کم کے قتل کرنے کی کوشش کرنے کا الزام لگایا ہے۔
یہ سینٹر امریکہ سیکورٹی ایجنسیوں اور خفیہ ایجنسیوں کے ساتھ تال میل بنا کر اپنے آپریشن کو انجام دے گا۔ سی آئی اے کے بے حد تجربہ کار افسر کو کوریا مشن سینٹر کانیا اسسٹنٹ ڈائریکٹر چنا گیا ہے۔ سی آئی اے کے ڈائریکٹر مائک پومپیو نے بیان جاری کر کے اس بات کی جانکاری دی۔ اس میں کہا گیا کہ شمالی کوریا کی طرف سے امریکہ اور اس کے ساتھ معاون ممالک کے لئے پیدا ہوئے خطرے سے نمٹنے کے لئے اس سینٹر کا قیام کیا گیا ہے۔

 

Share Article

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *