سی بی آئی کر سکتی ہے شیعہ اور سنی وقف بورڈ کی تفتیش

Central-Waqf-Boardالہ آباد : اترپردیش شیعہ اور سنی وقف بورڈمیں پائی جانے والی بد عنوانیوں پر ای ٹی وی اردو پر دکھائی جا نے والی خبر کا بڑا اثر ہوا ہے ۔ مرکزی حکومت کی سینٹرل وقف کونسل نے شیعہ اور سنی وقف بورڈ کی جانچ سی بی آئی سے کرانے کی سفارش کی ہے ۔ واضح رہے کہ گزشتہ سال یکم ستمبر کو ای ٹی وی اردو نے الہ آباد کے قدیم امام باڑہے وقف مر ز اغلام حیدر کو بلڈر کے ہاتھوں فروخت کیے جانے پر ایک خصوصی رپورٹ نشر کی تھی ۔ خبر دکھائے جانے کے بعد سینٹرل وقف کونسل نے معاملے کے جانچ کے لیے کمیٹی تشکیل دی تھی ۔

مرکزی حکومت کی سینٹرل وقف کونسل نے یو پی شیعہ اور سنی وقف بورد میں پائی جانے والی بد عنوانیوں پر اپنی اہم رپورٹ حکومت کو سونپ دی ہے ۔سینٹرل وقف کونسل نے ماہر قانون سید اعجاز نقوی پر مشتمل ایک رکنی جانچ کمیٹی تشکیل دی تھی ۔ یہ جانچ کمیٹی گزشتہ سال ای ٹی وی اردو پردکھائی جانے والی اس خبر کی بعد تشکیل دی گئی تھی ، جس میں الہ آباد کے تاریخی امام باڑے وقف مرزا غلام حیدر کو غیر قانونی طریقے سے منہدم کرنے اوراس کو بلڈر کے ہاتھوں فروخت کئے جانے کا انکشاف کیا گیا تھا ۔ ای ٹی وی پر خبر دکھائے جانے کے بعد عوامی دباؤ کے چلتے امام باڑے کو مقامی انتظامیہ نے سیل کر دیا تھا ۔ اوقاف کے تحفظ کے لیے عوامی تحریک چلانے والےشو کت عابدی نے ای ٹی وی کا شکریہ ادا کیا ۔

سینٹرل وقف کونسل نے اس معاملے کی سنجیدگی کو دیکھتے ہوئے ایک رکنی جانچ کمیٹی بنائی تھی ۔ گزشتہ دنوں جانچ کمیٹی نے اپنی رپورٹ سینٹرل وقف کونسل کو سونپ دی ۔ اس رپورٹ میں مرکزی حکومت سے شیعہ اور سنی وقف بورڈ کی جانچ سی بی آئی سے کرانے کی سفارش کی گئی ہے ۔

یو پی میں تبدیلی اقتدار کے بعد سے ہی شیعہ اور سنی وقف بورڈ میں پائی جانے والی مالی بد نظمی کی جانچ کرانے کا مطالبہ کیا جانے لگا ہے، لیکن اسی درمیان سینٹرل وقف کونسل کی رپورٹ منظر عام پر آجانے سے اس معاملہ نے مزید شدت اختیار کر لیا ہے ۔

 

Share Article

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *