شام میں کیمیائی حملہ انسانیت کی توہین: ڈونالڈ ٹرمپ

Trumpواشنگٹن۔ امریکہ کے صدر ڈونالڈ ٹرمپ نے شام میں ہوئے کیمیائی حملے کو ’نسل انسانی کی توہین‘ کے مترادف قرار دیا ہے۔ مسٹر ٹرمپ نے وہائٹ ہاؤس میں واقع اوول آفس میں اردن کے شاہ عبداللہ سے ملاقات کے بعد نامہ نگاروں سےکہاکہ شام کے ادلب علاقے میں کیمیائی حملہ بھیانک ہے۔شام سے متعلق نئی پالیسی کے سوال پر انہوں نے بغیر کسی وضاحت کے کہا ’آپ دیکھیں گے‘۔ امریکہ کے وزیر دفاع جم میٹس نے اس حملے کو نفرت انگیز قرار دیا۔ انہوں نے کہاکہ اس کے خلاف سخت کارروائی کی جانی چاہئے۔ اس سے ایک ہی روز قبل ایک تحریری بیان میں حملے کو ’’قابل ملامت‘‘ قرار دیتے ہوئے، اُنھوں نے کہا کہ ’’مہذب دنیا اسے نظرانداز نہیں کر سکتی‘‘۔ منگل کے روز شام میں ہونے والا دہشت ناک حملہ اردن کے قریب واقع خطے میں ہوا۔

ٹرمپ اور شاہ عبداللہ کے درمیان ہونے والی بات چیت کے ایجنڈا میں اسرائیل فلسطین امن مذاکرات کے دوبارہ اجرا کا امکان سرفہرست تھا۔ عرب دنیا کے ایک ایلچی کا سا انداز اپناتے ہوئے، اردن کے شاہ نے اسرائیل کے ساتھ امن معاہدے کے لیے نئے مفاد پر مبنی پیغام دیا، جس میں عرب اور مسلمان ملک یہودی ریاست کو تسلیم کریں، جس کے عوض مغربی کنارے، غزہ اور مشرقی یروشلم میں فلسطینی ریاست تشکیل دی جائے۔ گذشتہ ہفتے کے سربراہ اجلاس میں، عرب سربراہان نے 2002ء میں دیے گئے پیغام کا اعادہ کیا، جو اُنھوں نے پہلی بار اسرائیل کو تجویز کیا تھا۔ لیکن، اسرائیل 1967ء کی چھ روزہ لڑائی میں زیر قبضہ لیے گئے علاقوں کو خالی کرنے پر تیار نہیں۔

واضح رہے کہ امریکہ، برطانیہ اور فرانس نے شام میں مشتبہ کیمیائی حملے کیلئے شام کے صدر بشار الاسد کی فوج کو قصوروار قرار دیا ہے۔ اس حملے میں اب تک 100 سے زیادہ افراد ہلاک ہوگئے ہیں جن میں کئی بچے بھی شامل ہیں۔ حملے کی وجہ سے 400 دیگر لوگوں کو سانس لینے میں دشواری ہورہی ہے۔

 

Share Article

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *