کپواڑہ میں آرمی کیمپ پر دہشت گردانہ حملہ، 3 جوان شہید

Army-Campکپواڑہ: جموں کشمیر کے کپواڑہ کے پنجگام سیکٹر میں آرمی کیمپ پر دہشت گردانہ حملہ ہوا ہے۔ خودکش دہشت گردانہ حملہ میں ایک کیپٹن ، ایک جے سی او اور ایک جوان شہید ہو گئے۔ حفاظتی دستوں کے آپریشن میں دو دہشت گرد بھی بھی مارے گئے۔ یہ حملہ فوج کے آرٹیلری بیس پر ہوا ہے۔ یہ آرمی کیمپ ایل او سی سے 5کلو میٹر دور کپواڑہ میں واقع ہے۔
دہشت گردوں نے صبح پانچ بجکر پندرہ منٹ کے آس پاس ایل او سی کے پاس کپواڑہ کے پنجگام میں آرمی کیمپ میں گھسنے کی کوشش کی۔ دہشت گردوں نے اندھیرے کا فائدہ اٹھا کر آرٹیلری میں گھسنے کی کوشش کی تھی۔ حفاظتی دستوں نے دہشت گردوں کے خلاف آپریشن شروع کیا اور دو دہشت گردوں کو مار گرایا۔ اس حملہ کے بعد حفاظتی دستوں نے پورے علاقہ کو گھیر لیا ہے۔ کیمپ کے اندر اور باہر تلاشی مہم جاری ہے۔ مسلسل دونوں طرف سے فائرنگ ہو رہی ہے۔
اس حملہ میں کیپٹن سمیت فوج کے 3جوان شہید ہوئے ہیں۔ پانچ جوان زخمی ہوئے ہیں۔ زخمی جوانوں کو ہوائی راستے سے سری نگر لایا گیا ہے۔ زخمی جوانوں کا علاج سری نگر آرمی اسپتال میں کیا جا رہا ہے۔
اس حملہ کو لے کر دفاعی ماہرین نے پاکستان پر کرارا حملہ بولا ہے۔ راج قادیان نے کہا کہ پاکستان میں گھس کر کارروائی کرنی ہوگی۔ پاکستان اپنی حرکتوں سے باز نہیں آ رہا ہے۔ انھوں نے کہا کہ یہ علاقہ ایل او سی کے نزدیک ہے، اس لئے یہاں حملہ ہو تے رہتے ہیں۔ ان کو روکنے کے لئے وہاں جانا پڑے گا جہاں سے حملے ہوتے ہیں، ہمیں پاکستان کے خلاف سخت کارروائی کرنی ہوگی۔
کپواڑہ حملہ کے بعد وزارت داخلہ نے اعلیٰ سطحی میٹنگ بلائی ہے۔ وزیر داخلہ راجناتھ سنگھ کی صدارت میں یہ میٹنگ صبح 11بجے ہوگی۔ میٹنگ میں راجناتھ سنگھ کے علاوہ داخلہ سکریٹری، جوائنٹ سکریٹری جموں کشمیر، جموں کشمیر کے چیف سکریٹری، خفیہ محکمہ کے افسروں سمیت وزارت داخلہ کے دوسرے افسر موجود رہیں گے۔ حال ہی کے دنوں میں کشمیر میں حملے تیز ہوئے ہیں۔ اس کے ساتھ ہی علیحدگی پسندوں کی شہہ پر پتھربازی کے واقعات میں بھی اضافہ ہوا ہے۔

Share Article

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *