پانچ ساڑی چرانے پر ایک سال کی قید اور کروڑوں کی چوری کرنے والے کر رہے مزے: سپریم کورٹ

Saree-Choriنئی دہلی: ساڑی چرانے پر ایک سال سے جیل میں بند ایک شخص کے معاملہ کی سماعت کرتے ہوئے سپریم کورٹ نے تلنگانہ حکومت کی کھنچائی کی۔چیف جسٹس جے ایس کھیہر کی صدارت والی بینچ نے کہا کہ کروڑوں روپے لوٹنے والے لوگ زندگی میں مزے کر رہے ہیں اور مبینہ طور پر پانچ ساڑی چرانے والا شخص جیل میں ہیں۔
ملزم سی ایچ ایلہا پر الزام ہے کہ اس نے حیدرآباد میں پانچ ساڑیاں چرائی ہیں۔ تلنگانہ کی حیدرآباد پولس نے تاجروں کی شکایت پر اسے گرفتار کر لیا۔ وہ گزشتہ ایک سال سے بغیر ٹرائل کے جیل میں بند ہے۔ اس کی بیوی نے سپریم کورٹ میں اپیل دائر کی تھی۔
گزشتہ اس کی اپیل پر سماعت کرتے ہوئے چیف جسٹس جے ایس کھیہر نے کہا کہ کچھ ساڑیاں چوری کرنے والا جیل میں ہیں۔دوسری جانب ایک شخص ہے جو کروڑوں روپے لے بھی مزے کر رہا ہے۔ ممکنہ ان کا اشارہ ان لوگوں کی طرف تھا جو بینکوں سے کروڑوں کا قرض لے لیتے ہیں اور پھر اسے نہیں چکاتے ہیں۔ حالانکہ سماعت کے دوران تلنگانہ حکومت کے وکیل نے اس معاملہ میں ایلہا کی پریوینٹو گرفتاری کو صحیح ٹھہرایا۔
حکومت کی طرف سے دلیل دی گئی کہ ساڑی چوری کرنے والے گروہ سے تعلق رکھتا ہے۔ اس گروہ نے ساڑی چوریوں کی وارداتوں کو مسلسل انجام دیا ہے، جس کی وجہ سے تاجر بہت پریشان ہیں۔ ریاستی حکومت نے دلیل دی کہ اس کے خلاف مسلسل تاجروں کی شکایتیں آ رہی تھیں ۔ سپریم کورٹ میں اب معاملہ کی سماعت 8 مارچ کو ہوگی۔

Share Article

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *