سعودی شاہ کا نرالا انداز

Shah-Salman-Bin-Abdulazizتفریح انسانی فطرت ہے۔ ہر کوئی اپنی اپنی حیثیت کے مطابق تفریح کی جگہ کا انتخاب کرتا ہے اور اپنی حیثیت کے مطابق رسدو سامان اپنے ساتھ لے جاتا ہے۔یہ تو عام آدمی کی بات ہوئی ۔اب ذرا سوچئے کسی امیر ترین ملک کا امیر ترین بادشاہ تفریح کے لئے نکلا ہو تو اس کی شان و شوکت کیا ہوگی؟آئیے ہم آپ کو سعودی عرب کے بادشاہ شاہ سلمان کی حالیہ سیرو تفریح کی صورت حال سے واقف کراتے ہیں۔
شاہ سلمان بن عبدالعزیز السعود ان دنوں ایشیا کے ایک ماہ طویل دورے کے پہلے مرحلے میں انڈونیشیا میں ہیں۔ ایشیا کے دورے کے دوران وہ برونائی، جاپان، چین اور مالدیپ بھی جائیں گے۔ انڈونیشیا میں لوگ سعودی بادشاہ کے دورے میں کافی دلچسپی لے رہے ہیں۔
شاہ سلمان انڈونیشیا 459 ٹن اشیا کے ہمراہ پہنچے ہیں جن میں دو ایس 600 مرسڈیز گاڑیاں اور دو بجلی سے چلنے والی لفٹ شامل ہیں۔سعودی بادشاہ کے سامان کو ہنڈل کرنے والی کمپنی کا کہنا ہے کہ 459 ٹن سامان میں سے 63 ٹن جکارتہ میں اتارا گیا ہے جبکہ 396 ٹن سامان بالی میں اتارا گیا۔ان کے ہمراہ 620 لوگ ہیں اور ان کے علاوہ 800 مندوبین جن میں 10 وزرا اور 25 شہزادے بھی شامل ہیں۔ان کے سامان اور وفد میں شامل افراد کو جکارتہ لانے کے لیے 27 جہاز استعمال ہورہے ہیں جبکہ بالی لے جانے کے لیے 9 جہاز کا استعمال ہوا ۔اگرچہ شاہی خاندان اور ممالک کے سربراہان کے لیے لگژری اشیا اور اتنے بڑے وفد کے ساتھ سفر کرنا عام بات ہے لیکن انڈونیشیا کے کچھ افراد اس کو شاہ خرچی کہہ رہے ہیں۔قابل ذکر ہے کہ آخری بار سعودی بادشاہ نے انڈونیشیا کا دورہ 1970 میں کیا تھا جب شاہ فیصل بن عبدالعزیز صدر سوہارتو کے دورے حکومت میں جکارتہ آئے تھے۔

Share Article

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *