پارلیمانی کمیٹی کے سامنے آج بیورہ پیش کریں گے آر بی آئی کے گورنر ارجیت پٹیل

Urjit-Patelنئی دہلی: ریزرو بینک کے گورنر ارجیت پٹیل آج پارلیمانی کمیٹی کے سامنے نوٹ بندی کے بعد ہندوستانی نظام معیشت پر ہوئے اثرات اور نقدی کی کمی کے مدنظر مرکزی بینک کے ذریعہ اٹھائے گئے اقدامات کا بیورہ پیش کریں گے۔ مرکزی حکومت کی جانب سے سابق مرکزی وزیر اور کانگریس کے لیڈر ویرپا موئلی کی قیادت میں تشکیل دی گئی کمیٹی کے ممبران کے سامنے ریزرو بینک کے گورنر کو بنڈی کے بعد مرکزی بینکوں کی جانب سے اٹھائے گئے قدموں کا بیورہ پیش کرنا ہوگا۔ اس کمیٹی میں محکمہ اقتصادی امور، ریوینیو اور محکمہ مالی خدمات کے علاوہ وزارت مالیات کے نمائندگان کو ممبر بنایا گیا ہے۔
اس کے علاوہ آج پارلیمنٹ کی اسٹینڈنگ کمیٹی کی ہونے والی میٹنگ میں انڈین بینک ایسو سی ایشن، بھارتیہ اسٹیٹ بینک، پنجاب نیشنل بینک اور اورینٹل بینک آف کامرس کے نمائندگان کے بھی اس میٹنگ میں موجود رہنے کا امکان ہے۔ اس میٹنگ میں اہم طور پر نوٹ بندی کے 500اور 1000کے پرانے بڑے نوٹوں کے بند ہونے کے بعد پڑنے والے اثرات پر بحـث ہونے کی امید ہے۔اس کے علاوہ بتایا یہ بھی جا رہا ہے کہ نوٹ بندی کے ہی معاملے پر ریزرو بینک کے گورنر ارجیت پٹیل 20جنوری یعنی جمعہ کو پارلیمنٹ کی پبلک اکائونٹس کمیٹی کے سامنے بھی پیش ہوں گے۔
غور طلب ہے کہ وزیر اعظم نریندر مودی کے ذریعہ گزشتہ سال 8نومبر کو نوٹ بندی کے دوران 500اور 1000روپے کے پرانے نوٹوں کا چلن بند کرنے کا اعلان کرنے کے بعد سے ملک کے لوگوں کو نقدی کے بحران کا سامنا کرنا پڑا۔ حالت یہ ہو گئی کہ نوٹ بندی کے قریب تین مہینے بعد اب تک لوگوں کو کم و بیش نقدی کی قلت کا سامنا ہے۔دوسری طرف نوٹ بندی کی وجہ سے چھوٹے کاروباروں سے بڑی صنعتوں اور تھوک بازار سے رٹیل مارکیٹ تک کے علاوہ عام زندگی پر گہرے منفی اثرات پڑے ہیں۔

Share Article

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *