برکینی اور حجاب میں مقابلۂ حسن میں شرکت

ایک صومالی نژاد امریکی خاتون حلیمہ عدن نے ریاست منیسوٹا میں منعقدہ مقابلۂ حسن میں حجاب اور برکینی پہن کر شرکت کی ہے۔وہ امریکہ میں ایسا کرنے والی پہلی خاتون بن گئی ہیں۔19 سالہ حلیمہ عدن مقابلہ حسن میں پیراکی کے لباس کے مقابلے میں برکینی کے ساتھ شرکت کی_92705664_1d45d0c8-2da6-4163-8e4f-79233cbee40b۔
حلیمہ عدن کی پیدائش کینیا میں ہوئی تھی اور وہ بچپن میں ریاست منیسوٹا کے علاقے سینٹ کلاؤڈ منتقل ہو گئی تھیں۔اس دو روزہ مقابلہ حسن میں وہ 15 صف اول کی امیدواروں میں شامل رہیں۔ان کا کہنا ہے کہ وہ امید کرتی ہیں کہ ان کی شرکت سے مسلمان خواتین کو اپنی شناخت کے حوالے سے اعتماد ملے گا۔
حلیمہ عدن کا کہنا تھا کہ ‘بہت سارے لوگ آپ کو دیکھتے ہیں اور وہ آپ کے حسن کو دیکھ نہیں سکتے کیونکہ آپ ڈھکی ہوتی ہیں اور وہ اس کے عادی نہیں ہوتے، اس طرح زندگی گزارتے ہوئے میں نے اس طرف توجہ دی کہ لوگوں کو میرے لباس سے قطع نظر مجھے جاننے کا کا موقع ملے۔سینٹ کلاؤڈ کی ایک رہائشی کا کہنا تھا کہ وہ بہت خوش ہیں کہ حلیمہ 15 حتمی امیدواروں میں شامل کی گئی تھیں اور دنیا بھر میں خواتین کی جانب سے انھیں پذیرائی حاصل ہوئی ہے۔
حلیمہ عدن کا کہنا تھا کہ ‘یہ ہمارے لیے بہت بڑی کامیابی ہے۔ میں ایسا کرنے والی پہلی لڑکی ہوں اور میں امید کرتی ہوں کہ مزید مسلم خواتین کو برکینی پہنیں گی اور انھیں قبول کیا جائے گا۔وہ کہتی ہیں کہ ‘میں آپ کو چیلنج کرتی ہوں اور آپ کو کچھ بہترین کرسکتے ہیں آپ کو صرف وہی کرنا چاہیے۔
خیال رہے کہ امریکی ریاست منیسوٹا میں صومالی نژاد افراد کی ایک بڑی تعداد آباد ہے۔
مس منیسوٹا امریکہ کے مقابلہ حسن کی ایگزیکٹیو معاون ڈائریکٹر ڈینسی والس نے حلیمہ عدن کے روایتی لباس میں مقابلے کی شرکت کی تعریف کی ہے۔
ان کا کہنا تھا کہ ‘میرے خیال حلیمہ کا اسٹیج پر کھڑے ہونا دیگر خواتین کو یہ دکھانا ہے کہ وہ بھی ایسا کر سکتی ہیں اور یہ ان کے لیے ممکن ہے۔اس مقابلہ حسن کی فاتح منیاپولس کی رہائشی میرڈتھ گولڈ قرار دی گئی ہیں جو آئندہ سال مس امریکہ کے مقابلہ حسن میں شرکت کریں گی۔

Share Article

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *