شادی کی رسم و رواج : پر نالہ تو بے چاری بچیوں پر گرتاہے

آج کا معاشرہ تو کہنے کو کمپیوٹرکا معاشرہ ہے مگر افسوس کی بات ہے کہ جب کسی لڑکے اور لڑکی کی شادی کا موقع آتا ہے تو وہ رسم و رواج کے بندھن میں جکڑا ہوا نظر آتا ہے۔ اسی کے ساتھ ساتھ جہیز تِلک کی بیماری کا بھی یہ شکار ہوتاہے جوکہ کبھی کبھی دولہن کے مستقل ذہنی تنائو اور کبھی کبھی اسے جلا کر مارنے کا سبب بھی بنتا ہے۔ کسی بھی شہری علاقے میں گھوم جائیے، غیر شادی شدہ خواتین کی قابل ذکر تعداد دیکھنے کو مل جائے گی جو دولہن اس لئے نہیں بن سکیں کہ ان کے والدین جہیز دین

Read more

مہنگی پیاز کا ذمہ دار کون؟ خراب موسم، قحط ، بچولئے یا سرکار

کون نہیں جانتا کہ 1980میں ہندوستان کی اولین غیر کانگریسی حکومت کو ہی پیاز لے ڈوبی تھی اور تب اندرا گاندھی اور ان کی کانگریس ،جنہیں1977میں ایمر جنسی کے ختم ہونے کے بعد منعقد عام انتخابات میں مسترد کر دیا تھا، ایک بار پھر مرکز میں اقتدار میں آ گئی تھیں۔ تب یہ انتخابات ’پیاز والے انتخابات ‘ سیمنسوب کئے گئے تھے۔پیاز مہنگی ہونے کے بعد بھی سیاسی زلزلے آئے۔ 1998میں پیاز کی قیمت 60روپے فی کلو گرام تک بڑھ جانے سے اس وقت کی دہلی کی سشما سوراج کی سربراہی والی بھارتیہ جنتا پارٹی (بی جے پی)

Read more

بہار فرقہ پرستوں کی زد میں

صوفی و سنتوںکی سر زمین بہار فرقہ پرستوں کی زدمیں ہے ۔ فرقہ پرست طاقتیں منظم اور متحد ہوکر ریاست کی ہم آہنگی اور خیر سگالی کی فضا کو مکدر کر نے کی پے در پے کوششیں کر رہی ہیں ۔بہار میں موجودہ خلفشار اور پورے بہار کو فرقہ پرستی کے شعلوںمیں جلا دینے کی کوشش کیا نریندر مودی کی اس دھمکی کا اثر ہے جس میں انہوں نے بی جے پی کے گنے چنے 500 ؍افراد کو نتیش کمار سے بدلہ لینے کے لئے للکارا تھا ؟۔ نوادہ فساد کے دوران مسلمانوں کی دکانوں کو جلا تے وقت فسادیوں نے نریندر مودی زندہ باد کا نعرہ لگایا ۔ اس سے صاف ظاہر ہوا کہ بہار میں جو کچھ بھی ہو رہا ہے اس کے پیچھے آر ایس ایس اور نریندر مودی کا ہاتھ موجود ہے اور ان کے گرگے موجودہ حکومت سے بدلہ لینے کے

Read more

کثیر سونے والا ملک مالی :انتخابات کے بعد امکانات و اندیشے

جمہوریہ مالی مغربی افریقہ کا ایک ایسا غریب ملک ہے جہاں کی 90 فیصد آبادی سنی مسلمانوں پر مشتمل ہے۔1992 کے ایک ریفرنڈم کے مطابق یہاں ہر پانچ سال پر الیکشن ہوتا ہے اور صدر کو جزوی اختیارات حاصل ہوتے ہیں۔مغربی افریقہ کا یہ سب سے بڑا ملک ہے جس کی کل آبادی 14.5 ملین ہے ،جن میں 80

Read more

کولمبو بدھسٹ۔ مسلم فساد : مسئلہ زمین کی ملکیت کا نہ کہ مذہبی اختلاف کا

بدھ ازم کی تاریخ بہت پرانی ہے۔6 صدی قبل مسیح مگدھ کے دور میں اس مذہب کا تعارف ہوا۔ بہار کا علاقہ’ گیا‘ اس کا خاص مرکز رہا۔240 ق م میں شہنشاہ اشوکا نے اپنے ایک بیٹے ماہندا اور بیٹی سنگامیٹا کو سیلون ( سری لنکا) بھیجا ۔ وہاں کے راجا دیونم پیاتیسا نے ان دونوں کا پُر جوش استقبال کیا اور بدھ ازم کو فروغ دینے کے لئے ’آلوکا گوفہ ‘ میں ایک کونسل تشکیل دی۔تب سے سری لنکا میں بدھ مذہب فروغ پارہا ہے ۔ بدھسٹوں کی بڑھتی ہوئی یہ آبادی موجودہ وقت میں سری لنکا کیکل آبادی کا 70 فیصد ہوچکی ہے۔وقت کے ساتھ ساتھ بدھ ازم

Read more

شفافیت کی حامی نہیں ہے سرکار

پہلی بات تو یہ ہے کہ حق اطلاع قانون سی بی آئی جیسی جانچ ایجنسی کو اس کے دائرے سے باہر رکھنے کی اجازت نہیں دیتا ہے۔دوسری بات یہ ہے کہ اگر ایک جانچ ایجنسی کو اس سے چھوٹ ملی تو کیا مستقبل میں سی آئی ڈی پولیس یا دیگر جانچ ایجنسیوںکو بھی آرٹی آئی کے دائرے سے باہر رکھنے کا ارادہ ہے؟ ایسی ہی مانگ اگر ریاستی سرکار کی جانچ ایجنسیوں کی طرف سے اٹھنے لگے تو اس کی اطلاع کے بعد حق اطلاع قانون میں کیا بچے گا؟معاملہ چاہے لوک پال کا ہو یا پھر بدعنوانی کا، سب کے پیچھے اصل وجہ سرکاری کام کاج میں

Read more

یومِ آزادی پر چند چبھتے سوالات

ایک بار پھر یومِ آزادی منایا گیا۔ ہر سال کی طرح اس سال بھی یومِ آزادی کے موقع پر مختلف اخبارات و رسائل نے آزادی سے متعلق مضامین شائع کیے اور اس بات کو بحث کا موضوع بنایا کہ کیا ہندوستان کی تقسیم ہونی چاہیے تھی، یا یہ کہ اگر ہندوستان کی تقسیم نہیں ہوتی، تو کیا ہوتا۔
جب کہ ہندوستان کی تقسیم کے وقت انگریزوں سے اس وقت جو مذاکرات کیے گئے تھے، وہ بہت ہی دلچسپ ہیں، لیکن آج اس پر بحث کرنے کا کوئی فائدہ نہیں ہے کیا تقسیم ہونا چاہیے تھی۔ اب تقسیم تاریخ کا ایک جز اور ایک حقیقت بن چکی ہے۔ ہندوستان اور پاکستان کو اچھے پڑوسیوں کی طرح ایک ساتھ رہنا ہے اور یہاں کے عوام کو یہ مشورہ دینا ہے کہ ان کے درمیان تعلقات کو کیسے بہتر بنایا جائے۔

Read more

آزادی کا دن قومی وقار کا دن ہے، اس سے کوئی کھلواڑ نہیں

ترقی پذیر اور سیکولر ہندوستان میں فرقہ پرستی کے لئے کوئی جگہ نہیں یہ الفاظ 15اگست کے موقع پر لال قلعہ کی فصیل سے ہمارے وزیر اعظم نے کہے ہیں۔ ظاہر ہے یہ سننے میں بہت اچھے لگ رہے ہیں ،لیکن اصلیت میں ہندوستان میں اس وقت جو سیاست کام کر رہی ہے ، اس میں فرقہ پرستی کا زہر بہت پھیل چکا ہے، لیکن اس وقت ہمیں اس مسئلہ پر، اس بیان پر بات نہیں کرنی ہے۔ یوم آزادی ہمارے لئے فخر کا دن ہے۔ 67سال بعد بھی ہماری آزادی وہ نہیں ہے جسکا ہم نے تصور کیا تھا ،لیکن پھر بھی یہ ہمارا قومی دن ہے اور ہمیں اس دن کا احترام کرنا ہی چاہئے ، ہمارے وزیر اعظم اس دن پوری دنیا کے لئے ہندوستان کی نمائندگی کرتے ہیں۔ سیاسی پارٹیوں یا حکمراں پارٹی سے ملک کے عوام کے یا اپوزیشن کے جو بھی

Read more

مہا بھارت کے آثار نظر آ رہے ہیں

پارلیمانی نظام کی جیسی شکل ہمارے ملک میں ہے، اس کا استعمال ہوشیار لوگ اپنے حق میں جس طرح کرتے ہیں، وہ مطالعہ کے قابل ہے۔ کلاسیکی انداز سے دیکھیں، تو پارلیمانی نظام کا استعمال عوام کے دکھ درد کے ازالہ کے لیے ہونا چاہیے اور ملک میں پھیلے ہوئے کسی بھی طرح کے مسئلے کا حل پارلیمنٹ سے نکلنا چاہیے، لیکن ہماری پارلیمنٹ اس صورتحال سے میلوں دور ہے۔

Read more

جموں و کشمیر میں کشتواڑ فساد کے بعد فرقنہ وارانہ خلیج کو پاٹنے کی ضرورت

جموں و کشمیر کا کشتواڑ خطہ صدیوں سے آپسی مذہبی رواداری کی علامت رہا ہے۔ مگر گزشتہ دنوں موٹر سائیکل کے ایک معمولی حادثہ اور عید کی نماز ادا کرتے اجتماع پر پتھراؤ کے بعد شروع ہوئے ہند و مسلم فرقہ وارانہ فساد میں چند افراد کی ہلاکت اور سینکڑوں کے زخمی ہونے سے وہاں کا فرقہ وارانہ ماحول بگڑ گیا ہے۔ ضرورت ہے کہ جہاں ریاستی حکومت مہلوکین کے ورثاء کو مناسب ہرجانہ اور زخمیوں کی طبی امداد میں پورا تعاون دے، وہیں اس کے ذمہ دار افراد کی نشاندہی کرکے انہیں سخت سے

Read more