سمجھداری کریں آر ٹی آئی کا استعمال

حق اطلاعات قانون ( آرٹی آئی) کے تحت اطلاع مانگنے اور بد عنوانی کا پردہ فاش کرنے والوں کو پریشان کیے جانے کا امکان رہتا ہے۔کچھ ایسے معاملے سامنے آئے ہیں کہ جب اطلاع مانگنے سے بڑی سطح پر ہو رہی بد عنوانی کا خلاصہ ہونے والاتھا تو آر ٹی آئی کے ذریعہ اطلاع مانگنے والے کو پریشان کیا گیا ، لیکن اس کا یہ مطلب نہیں ہے کہ ہر درخواست کنندہ کو ایسی دھمکی کا سامنا کرنا پڑے ۔بہر کیف  ہر درخواست دینے پر ایسی پریشانی کا سامنا نہیں کرنا پڑتا ہے۔ہاں!  ایسا ان معاملوں میں ہو سکتا ہے،جن کی اطلاع مانگنے پر نوکر شاہوں اور ٹھیکداروں کے بیچ ملی بھگت کا پردہ فاش ہوسکتا ہے یا پھر کسی مافیا کے گٹھ جوڑ کے بارے میں پتہ چل سکتا ہے۔ایسے میں سوال یہ اٹھتا ہے کہ کوئی درخواست کنندہ ایسی صورت میں حق اطلاعات قانون کا استعمال کیوں کرے؟دراصل پورا سسٹم اتنا بگڑ چکا ہے کہ اگر ہم اکیلے یا ساتھ مل کر اسے سدھارنے کی کوشش نہیں کریں گے تو یہ کبھی ٹھیک نہیں ہوگا اور اگر ہم کوشش نہیں کریں گے تو سوال یہ پیدا ہوتا  ہے کہ اور کون کرے گا؟اس لئے ہمیں کوشش تو کرنی ہی ہوگی، لیکن ہمیں منصوبہ بند طریقے سے اس سمت میں کام کرنا ہوگا، تاکہ کم سے کم خطروں کا سامنا کرنا پڑے۔ تجربہ کے ساتھ کچھ سیکورٹی اور منصوبے بھی ضروری ہیں۔ آپ اگر کسی بھی ایشو پر حق اطلاعات قانون کے تحت اطلاع مانگتے ہیں تو درخواست دیتے ہی آپ پر کوئی حملہ نہیں کرے گا۔ پہلے تو وہ آپ کو بہلانے یادل جیتنے کی کوشش کرے گا۔ اس لئے جیسے ہی اس طرح کی کوئی درخواست ڈالیں ، جس میں آپ نے اپنی پریشانی کا ذکر کیا  ہے ،کوئی آپ کے پاس آکر بڑی نرمی سے درخواست واپس لینے کے لئے کہے گا۔ آپ اس آدمی کی باتوں سے یہ سمجھ سکتے ہیں کہ وہ کتنا سنجیدہ ہے اور وہ کیا کر سکتا ہے۔ اگر آپ کو معاملہ سنگین لگتا ہے تواپنے 10-15 جاننے والوں کو اسی عوامی محکمے میں وہی اطلاع مانگنے کے لئے فوری طور پر درخواست دینے کے لئے کہیں ۔ اگر آپ کے دوست ملک کے الگ الگ حصوں میں رہتے ہیں تویہ اور بھی اچھا ہوگا ۔ اب کسی کے لئے پورے ملک میں پھیلے آپ کے دس پندرہ دوستوں کو ایک ساتھ نقصان پہنچانا بہت مشکل ہوگا۔ ملک کے دوسرے حصوں میں رہنے والے آپ کے دوست ڈاک کے ذریعہ بھی درخواست بھیج سکتے ہیں۔ اس کو زیادہ سے زیادہ مشتہر کرنے کی کوشش کریں۔ اس سے آپ کو صحیح اطلاع بھی مل جائے گی اور ایسے میں آپ کو کم سے کم خطروں کا سامنا کرنا پڑے گا۔ اس کے بعد ایک اور سوال اٹھتا ہے کہ اطلاع موصول ہونے کے بعد ایک آرٹی آئی درخواست کنندہ کو کیا کرنا چاہئے؟اس کا کوئی ایک جواب نہیں ہوسکتا ہے۔یہ اس بات پر منحصر ہوگا کہ آپ کو کس طرح کی اطلاع چاہئے اور آپ کا مقصد کیا ہے؟بہت سے معاملوں میں صرف اطلاع مانگنے سے ہی مقصد حل ہوجاتا ہے۔ مثال کے طور پر آپ  کو درخواست کی پوزیشن کی جانکاری مانگنے سے ہی آپ کا پاسپورٹ اور راشن کارڈ آپ کو مل جاتا ہے۔ بہت سے معاملوں میں سڑکوں کی مرمت پر پچھلے کچھ مہینوں میں خرچ ہوئے پیسوں کا حساب مانگتے ہی سڑک کی مرمت ہو جاتی ہے، اس لئے اطلاع کی مانگ کرنا اور سوال پوچھنا خود ایک اہم قدم ہے،لیکن اگر آپ نے آر ٹی آئی کا استعمال کرکے بد عنوانی اور گھوٹالوں کو اجاگر کیا ہے تو آپ ویجلنس ڈپارٹمنٹ اور سی بی آئی میں ثبوت کے ساتھ شکایت درج کر سکتے ہیں اور ایف آئی آر بھی درج کرا سکتے ہیں۔ کئی مرتبہ دیکھا جاتا ہے کہ شکایت درج کرانے کے بعد بھی قصورواروں کے خلاف کارروائی نہیں ہوتی۔ آر ٹی آئی کے ذریعہ آپ ویجلنس ایجنسیوں پر بھی ان کے پاس درج شکایتوں کی صورت حال کی جانکاری مانگ کر دبائو ڈال سکتے ہیں۔ گھوٹالوں کو میڈیا کے ذریعہ بھی اجاگر کیا جا سکتا ہے لیکن قصورواروں کو سزا ملنے کا تجربہ بہت حوصلہ افزا نہیں رہاہے۔ پھر بھی ایک بات طے ہے کہ اس طرح اطلاع مانگنے اور قصورواروں کو بے نقاب کرنے سے مستقبل میں اصلاح ہوگی۔ یہ افسروں کے لئے ایک اشارہ ہے کہ لوگ بیدار ہو گئے ہیں اور پہلے کیطرح کوئی بھی غلط کام اب چھپا نہیں رہ سکتا ہے ۔اس طرح ان کے پکڑے جانے کا امکان زیادہ رہتا ہے۔

کسی بھی سرکاری محکمہ میں رکھے ہوئے کام کے لئے
بخدمت شریف،                        بتاریخ
پبلک انفارمیشن آفیسر
ڈسٹرکٹ فوڈ پروسیسنگ آفیسر
پتہ  ————————————————————
—————————————————————
موضوع: حق اطلاعات قانون 2005  کے تحت درخواست
(راشن کارڈ، پاسپورٹ، بردھا پنشن،ایج،برتھ ،ڈیتھ ،ریسیڈنٹ سرٹیفکیٹ بنوانے یا انکم ٹیکس ریفنڈ ملنے میں تاخیر ہونے، رشوت مانگنے یا بلا وجہ پریشان کرنے کی صورت میں مندرجہ سوالوں کی بنیاد پر آر ٹی آئی کی درخواست)
جناب عالی،
خدمت میں،میں نے آپ کے محکمے میں ————-تاریخ کو————-کے لئے درخواست دی تھی(درخواست کی کاپی منسلک ہے)، لیکن اب تک میری درخواست پر تسلی بخش قدم نہیں اٹھایا گیا ہے۔برائے مہربانی اس سلسلے میں مندرجہ ذیل اطلاعات مہیا کرائیں۔
میری درخواست پر کی گئی یومیہ کارروائی مطلب ڈیلی ڈیولپمنٹ رپورٹ مہیا کرائیں۔ میری درخواست کن کن افسروں کے پاس گئی اور کس آفیسر کے پاس کتنے دنوں تک رہی اور اس دوران ان افسروں نے اس پر کیا کارروائی کی؟مکمل تفصیل فراہم کرائیں۔
محکمہ کے دستور کے مطابق میری درخواست پر زیادہ سے زیادہ کتنے دنوں میں کارروائی پوری ہو جانی چاہئے تھی؟کیا میرے معاملے میں مذکورہ مقررہ وقت کا خیال رکھا گیا ہے؟
برائے مہربانی ان افسروں کے نام اور عہدے بتائیں، جنہیں نے میری درخواست پر کارروائی کرنی تھی لیکن انہوں نے کوئی کارروائی نہیں کی۔
اپنا کام ٹھیک سے نہ کرنے اور عوام کو پریشان کرنے والے ان افسروں کے خلاف کیا کارروائی کی جائے گی؟یہ کارروائی کب تک کی جائے گی؟۔
اب میرا کام کب تک پورا ہوگا؟
برائے مہربانی مجھے سبھی درخواست ؍ریٹرن؍پٹیشن؍شکایت کی لسٹ مہیا کرائیں ،جو میری درخواست ؍ریٹرن؍پٹیشن؍شکایت کے جمع کرنے کے بعد جمع کی گئی ہے۔لسٹ میں مندرجہ ذیل اطلاع ہونی چاہئے:(1) درخواست کنندہ ؍ٹیکسدہندہ؍عرضی گزار؍متأثرہ شخص کا نام (2) رسید نمبر (3) درخواست؍ریٹرن؍پٹیشن؍شکایت کی تاریخ۔
برائے مہربانی ریکارڈ کے اس حصے کی فوٹو کاپی دیں، جو مذکورہ درخواست؍ریٹرن؍پٹیشن؍شکایت کی رسید کا بیورا رکھتے ہوں؟
میری درخواست کے بعد اگر کسی درخواست ؍ریٹرن ؍پٹیشن؍شکایت پر نمبر آنے سے پہلے عمل کیا گیا ہو تو اس کا سبب بتائیں؟
میں درخواست فیس کے طور پر 10 روپے الگ سے جمع کر رہا ؍رہی ہوں۔     یا
میں بی پی ایل کارڈ ہولڈر ہوں اور تمام فیس سے آزاد ہوں۔میرا بی پی ایل کارڈ نمبر—ہے
شکرگزار
نام  ————————————    دستخط —————————————————
پتہ ——————————————————————————————–

Share Article

One thought on “سمجھداری کریں آر ٹی آئی کا استعمال

  • July 4, 2013 at 11:38 am
    Permalink

    آج تقریبن دیڑھ مہینہ ہو گیا ہے مگر ہر بار کہا جاتا ہے کے گیورمنٹکا پپر نہیں آیا ہے تو مجھے رتی کی درخواست دینی ہو کیا کرنا چاہیے بری مہربانی مجھے ملامت فراہم کرے یاد رہے یہ میرا پہلا موقع ہے کے می رتی کو استمالکر رہا ہوں سلام مسنون بعد سلام مجھے جاننا ہے کے مہینے ایل پی جی گیس ڈسٹریبیوٹر کے پاس نام تبدیل کروانے کے لئے درخواست دی تھی

    Reply

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *