یو پی بنا سیکڑوں سیاسی پارٹیوں کا میدان جنگ

سلمان عبدالصمد
ریاست اترپردیش میں 2012 میں ہونے والے اسمبلی انتخابات کے لیے تقریباً200 پارٹیاں طبع آزمائی کرنے جارہی ہیں۔ ریاستی چیف الیکشن کمشنر امیش سنہا کے مطابق موجودہ انتخابات میں 178 رجسٹر ڈ جماعتیںقسمت آزمائی کے لیے تیار ہیں۔ 1969 کے اسمبلی انتخابات میں کل 17 رجسٹرڈ جماعتیں تھیں۔ 1974 میں 16، 1977 اور 1980 میں سات سات، 1985 میں صرف 2،

Read more

کیا شیلا سرکار کو اردو زبان سے بیر ہے

وسیم احمد
اردو کے نام پر شام غزل،مشاعرے اور سمینار کراکر واہ واہی لوٹنے کا ہنر کوئی شیلا سرکار سے سیکھے۔اردو طبقہ میں سر خرو ہونے کے لئے اردو وراثت میلہ جیسے تماشوں پر لاکھوں روپے خرچ کرکے یہ جتانے کی کوشش کی جاتی ہے کہ سرکار اردو کے تئیں مخلص ہے۔کبھی کبھار غالب سمینار اور اردو کے کسی پروگرام میں وزیر اعلیٰ چند پل کے لئے شامل ہوکر کریڈٹ لینے کی کوشش کرتی ہیں ۔کبھی کبھی اس سے بھی تھوڑا آگے بڑھ کراردو کو ان کے ذریعہ دوسری سرکاری زبان کا درجہ دیے جانے کی

Read more

یو پی اسمبلی انتخابات مسلمانوں کے لئے فیصلہ کن گھڑی

محمد فرقان عالم
یو پی آبادی کے اعتبار سے ہندوستان کا سب سے بڑا صوبہ ہے۔ اس صوبے کو جہاں علمی وادبی افق پر ایک اہم مقام حاصل ہے ، وہیں سیاسی میدان میں بھی اس کی حیثیت مسلم ہے۔ یہی وجہ ہے کہ تمام سیاسی پارٹیاں یہاں کی کامیابی کو ہی اپنی ترقی کا ضامن سمجھتی ہیں،جو بہت حد تک صحیح بھی ہے۔ اس لیے تمام پارٹیوں کا خیال یہ ہے کہ اگر اترپردیش میں ان کی پوزیشن مضبوط رہی تو مرکز میں بھی انہیں کا دبدبہ ہوگا یعنی پارٹیاں 2014کے پارلیمانی انتخاب پر بھی نگاہیں جمائے ہوئی ہیں ۔ نتیجتاًوہ اترپردیش کی کامیابی کو 2014کا مقدمہ سمجھ رہی ہیں۔ مذکورہ مقاصد کے پیش نظر تمام چھوٹی بڑی پارٹیاں میدان میں پوری طرح سرگرم ہو

Read more

ملائم سنگھ کے خاندان میں اکھلیش اور شیو پال آمنے سامنے

روبی ارون
یو پی میں سماجوادی پارٹی کا یہ نیا چہرہ ہے، جہاں پالیسیوں پر علیحدگی ہے، ٹکراؤ ہے، اقتدار پر قابض ہونے کی خواہش ہے اور پارٹی میں بالادستی قائم کرنے کو لے کر اندر ہی اندر سلگ رہا غصہ ہے۔ یہ اکھلیش یادو کا سماجواد ہے، جو اُن کے والد ملائم سنگھ کے سماجواد کے بالکل برعکس ہے۔ ملائم سنگھ یادو نے کسی بھی اتار چڑھاؤ میں اپنے جس کنبے کو ایک ڈور میں باندھے رکھا تھا، ان کا وہی کنبہ اب انتشار کے دہانے پر ہے۔ بھائی شو پال سنگھ یادو، بیٹے اکھلیش یادو اور بیوی سادھنا گپتا کی خوا

Read more

کچھ تو اچھا کیا ہے الیکشن کمیشن نے

وسیم راشد
الیکشن کا زمانہ پورے ہندوستان میں ایک تہوار کا سا سماں پیش کرتا ہے۔ جب سے الیکشن کی تاریخوں کا اعلان ہوتا ہے تبھی سے ایک عجب طرح کا جوش و خروش ، ہنگامہ ہر طرف نظر آتا ہے۔ہندوستان کی پانچ ریاستوں میں ہونے والے الیکشن بھی اس وقت پورے ملک میں عوام کے ذہنوں پر حاوی ہیں۔ ہمیں یاد ہے ہمارے بچپن سے شعور کی منزلوں تک کئی بار الیکشن ہوئے ،ہر با

Read more

یہ ہندوستان کے لئے امتحان کی گھڑی ہے

کمل مرارکا
جتنا ہم محسوس کرتے ہیں ، اس سے زیادہ مشکل دور سے ہمارا ملک گزر رہا ہے۔ 1991 میں ہوئی اقتصادی اصلاحات نے بہت سارے امکانات پیدا کیے، جنہوں نے اس بات کی امید بڑھائی کہ ملک کی اقتصادی شرح ترقی میں اضافہ ہوگا۔ گزشتہ بیس سالوں میں بہت سارے واقعات رونما ہوئے۔ اقتصادی شرح ترقی میں لگاتار اضافہ ہوا، جسے مختلف شعبوں میں ہونے والی ترقی میں دیکھا جاسکتا ہے۔ بڑے اور چھوٹے شہروں میں سڑکوں، فلائی اووروں اور مالس وغیرہ کی تعمیر بڑے پیمانے پر ہوئی۔ متوسط طبقہ نے اچھی ترق

Read more

اتر پردیش کے عوام کو مداخلت کرنی چاہئے

سنتوش بھارتیہ
اکھلیش یادو کے ایک بیان نے اتر پردیش کی سیاست میں ہلچل پیدا کردی۔ اکھلیش سماجوادی پارٹی کے صوبائی صدر ہیں اور ملائم سنگھ یادو کے صاحبزادے۔ ڈی پی یادو کو پارٹی میں نہ لینے کے اعلان نے ان کی پارٹی میں بھی اختلافات پیدا کیے اور اتر پردیش کی سیاست میں بی جے پی کو کارنر پر کھڑا کر دیا۔ عام طور پر مانا جاتا ہے کہ اگر یہ فیصلہ ملائم سنگھ کو لینا ہوتا تو وہ شاید

Read more

جنرل وی کے سنگھ نے فوج کی عظمت کو بچایا ہے

ڈاکٹر منیش کمار
ملک کی عدالتِعظمیٰ میں فوج اور حکومت آمنے سامنے ہے۔ آزادی کے بعد ہندوستانی فوج کا یہ سب سے شرمناک امتحان ہے، جس میں بری فوج کے سربراہ کے ادارہ کو حکومت داغدار کر رہی ہے۔ پہلی بار آرمی چیف اور حکومت کے درمیان موجود تنازع کافیصلہ عدالت میں ہوگا۔ تنازع بھی ایسا، جسے سن کر پوری دنیا میں ہندوستان کا مذاق اڑایا جا رہا ہے۔ یہ معاملہ آرمی چیف جنرل وجے کمار سنگھ کی تاریخ پیدائش کا ہے۔ اس معاملے میں ایک پی آئی ایل سپریم کورٹ کے سامنے ہے۔ وہاں کیا ہوگا، یہ پتہ نہیں، لیکن اس تنازع کو لے کر جو بھرم پھیلا یا جا رہا ہے، اسے سمجھنا ضروری ہے۔ چوتھی دنیا نے اِس تنازع پر تحقیقات کی۔ تقریباً چھ ماہ قبل ہم نے اِس تنازع

Read more

رنگناتھ مشرا کمیشن۔۔۔۔۔۔۔اور کچھ نہیں

وسیم راشد
آج کل پورے ہندوستان میں ایک زبردست ہلچل مچی ہوئی ہے ۔یوں کہہ لیجئے کہ ایک تہوار کا سا سماں ہے،جہاں پانچ ریاستوں میں ہونے والے الیکشن کی دھوم ہے ،وہیں انا ہزارے کا انشن ،جن لوک پال بل ، مسلم ریزرویشن وغیرہ جیسے اہم موضوعات دہلی کی سیاسی فضاء کو بھی گرمائے ہوئے ہیں۔لوک سبھا میں جن لوک پال بل جیسے تیسے پاس ہوکر راجیہ سبھ امیں لٹک گیا۔ وہ لوک پال جس کا بے صبری سے انتظار تھا۔40سال سے جس لوک پال کا صرف نام ہی سنا تھا ،پہلی بار انا ہزارے نے پورے ہندوستان کو اس بل کے نام سے متعارف کرایا۔آج انا کی کوششوں سے کم سے کم اس کا ڈرافٹ تو تیار ہوا اب اس کا کیا روپ بیٹھتا ہے یہ تو وقت ہی بتائے گا لیکن اس میں بھی مسلمانوں کے ریزرویشن کو لے کر کافی ہنگامہ مچاہوا ہے اور اس میں ہی کیا،آجکل جہاں دیکھئے مسلمانوں کو بڑی اہمیت دی جارہی ہے۔مسلم ایشو ز ،مسلمانوں ک

Read more

ملک کا اعتماد ٹوٹنے مت دیجئے

سنتوش بھارتیہ
سال 2009 میں ایک بڑا واقعہ ہوا۔ چوتھی دنیا نے رنگناتھ مشرا کمیشن کی رپورٹ شائع کردی اور سرکار سے کہا کہ اگر یہ رپورٹ جھوٹی ہے تو وہ کہے کہ یہ رپورٹ جھوٹی ہے۔ اُس رپورٹ کو لے کر راجیہ سبھا میں چار پانچ دنوں تک کافی ہنگامہ ہوتا رہا۔ راجیہ سبھا کے ممبروں نے ہمارے خلاف خصوصی اختیار کی خلاف ورزی کا معاملہ اٹھایا اور ہم نے خصوصی اختیار کی خلاف ورزی کے نوٹس کا جواب بھی دیا۔ ایک طرف راجیہ سبھا نے ہمارے خلاف خصوصی اختیار کی خلاف ورزی کا معاملہ اٹھایا، وہیں دوسری طرف اگلے ہی دن لوک سبھا میں 20 سے زیادہ ممبر چوتھی دنیا ہاتھ میں لے کر کھڑے ہو گئے اور انہوں نے وزیر اعظم کے اوپر د

Read more
Page 1 of 212