میں بھی حاضر تھا وہاں۔۔۔۔۔

یوم خواتین کے موقع پر خواتین کا کل ہند مشاعرہ
نئی دہلی:اردو اکادمی دہلی کے زیر اہتمام یوم خواتین کے موقع پر غالب انسٹی ٹیوٹ میں خواتین کے کل ہند مشاعرہ کا انعقاد کیا گیا۔جس کا افتتاح حکومت دہلی کی کابینہ وزیرپروفیسر کرن والیہ اور اکادمی کے وائس چیئر مین پروفیسر اخترالواسع نے شمع روشن کرکے کیا۔دیر شب تک چلے اس نہایت ہی کامیاب مشاعرہ کی نظامت کے فرائض چوتھی دنیا انٹرنیشنل اردو ویکلی کی ایڈیٹر محترمہ وسیم راشد نے اپنے منفرد لب و لہجہ میں بحسن و خوبی انجام دئے۔مشاعرہ میںعذرا نقوی، شائستہ جمال، ڈاکٹر عفت زریں، ڈاکٹر تیجندر ادا، حنا تیموری، ڈاکٹر نسیم نکہت،نکہت امروہوی، دیپتی مشرا، ملکہ نسیم، تاجور سلطانہ، عظمیٰ اختر، ریحانہ نواب، نسیم نیازی، ترنم کانپوری، ریحانہ شاہین، اناد ہلوی، وسیم راشد، صبابلرامپوری، نوری پروین، پروین صبا، میگھاکسک، ڈاکٹر شاہدہ صدیقی، سویتا اسیم، ریما ایرانی اور ایشا ناز نے اپنے کلام سے سامعین کو محظوظ کیا۔آخر میں اکادمی کے سکریٹری انیس اعظمی کے اختتامی کلمات کے ساتھ مشاعرہ ختم ہوا۔
اردو صحافیوں کی صلاحیت سازی کا مختصر مدتی کورس اختتام پذیر
نئی دہلی:قومی کونسل برائے فروغ اردو زبان کے ڈائریکٹر ڈاکٹر حمیداللہ بھٹ نے آج یہاں فروغ اردو بھون میں اردو صحافیوں کی صلاحیت سازی کے کورس کے اختتامی پروگرام میں کہا کہ انگریزی اور ہندی کے اخبارات خود کو قومی نمائندہ ہونے کا دعویٰ تو کرتے ہیں لیکن وہ پسماندہ طبقات اور اقلیتوں کے مسائل کے بارے میں خاطر خواہ توجہ نہیں دیتے جبکہ اس کے برعکس اردو اخبارات اس میدان میں اپنی ایماندارانہ کوششیں کرتے ہیں۔ صحافتی دنیا کی ممتاز شخصیت ایم جے اکبر نے اس موقع پر صحافیوں کو خطاب کرتے ہوئے کہا کہ ہندوستان جیسے کثیر المذاہب اور کثیر اللسان جمہوری ملک کی اردو جیسی زبان بہت سی ضرورتوں کی تکمیل کرتی ہے ۔ یہی وجہ ہے کہ ہمارے ملک میں اردو زبان کی زبردست افادیت و اہمیت ہے۔ اس لیے ملک کی مثبت تعمیر میں اردو صحافیوں کو بھی اپنا نمایاں کردار ادا کرنا چاہیے۔اس موقع پر کلدیپ نیئر، عزیز برنی، شاہد صدیقی، او پی ورما،ظفر آغا، سید اسد رضا نقوی، تحسین منور ، وسیم راشداور دیگر اہم صحافیوں نے اپنے خیالات کا اظہار کیا۔ پروگرام میں اردو صحافت کا مختصر مدتی کورس کرنے والے نوجوان صحافیوںکو قومی اردو کونسل نے سرٹیفیکٹ بھی تقسیم کیے۔واضح رہے کہ اردو کے اہم اخبارات کے صحافیوں نے اس تربیتی کورس میں حصہ لیا تھا۔ جس میں صحافت، ہماراسماج، راشٹریہ سہارا اردو، ہندوستان ایکسپریس، جدیدمیل، ان دنوں، دعوت، صبح انقلاب، اخبارمشرق، عندلیب اور چوتھی دنیا انٹرنیشنل اردو ویکلی سے رضی احمد، فیض الاسلام فیضی، طفیل احمد اور سلمان علی نے شرکت کی تھی۔
عالمی امن کانفرنس کا انعقاد
نئی دہلی:انڈیا اسلامک کلچر سینٹر میں حسن آرا ٹرسٹ کے زیر اہتمام ایک عالمی امن کانفرنس کا انعقاد کیا گیا، جس میں ملکی وغیر ملکی دانشواروںنے سیرتِ طیبہ کے مختلف پہلوئوں پر مدلل و جامع تقاریر کیں اور دنیا میں امن و اتحاد کے لئے سیرتِ رسولؐ پر عمل کرنے کو ضروری قرار دیا۔ کا نفرنس میں مہمانِ خصوصی کے طور پردہلی کی وزیرِ اعلیٰ شیلا دیکشت نے شرکت کی جبکہ مسلم پرسنل لاء بورڈ کے نائب صدر اور شیعہ عالمِ دین مولانا ڈاکٹر کلبِ صادق نے کلیدی خطبہ پیش کیا۔سمینارکاافتتاح وزیرِ اعلیٰ شیلا دیکشت،سعودیہ عربیہ کے سفیر فیصل بن حسن طراد اور دیگر مہمانان نے شمع روشن کرکے کیا۔ اس موقع پر سعودیہ عربیہ کے سفیر برائے ہندوستان فیصل بن حسن طرادنے اپنی تقریر میںکہا کہ اسلام فرقوں میں تقسیم ہونے کا پیغام نہیں دیتا بلکہ آپس میں اتحاد کا پیغام دیتا ہے۔ محترمہ شیلا دیکشت نے تمام دنیا کے موجودہ انقلابی حالات کا تذکرہ کرتے ہوئے کہا کہ ان مسائل کے حل کے لئے اسلامی پیغامات کا سہارا لیا جاسکتاہے۔ انہوں مزید کہا کہ اسلام کے ذریعہ دنیا میں پھیلی تشدد کی آگ کو ٹھنڈا کیا جاسکتا ہے۔ عراق کی کارگزار سفیرمحترمہ ابیر ایس خلیفہ نے اپنے بیان میں کہاکہ یہ بات قابلِ مسرت ہے کہ آج مختلف مذاہب کے لوگ ایک چھت کے نیچے امن اور یکجہتی کی بات کررہے ہیں۔ ڈاکٹر کلبِ صادق نے اپنی تقریر میں معاشرہ کی اصلاح پرزور دیتے ہوئے اسلام کی تعلیمات کو عام کرنے کی اپیل کی۔ کانفرنس کی نظامت ڈاکٹر عظیم امروہوی نے کی۔
عظیم اختر کی کتاب ’’مسافر نوا ز بہتیرے‘‘ کی رسمِ اجراء
نئی دہلی : اردو پریس کلب اور انجمن ترقی ارد وہندکے زیر اہتمام عظیم اختر کے سفر نامہ ’’مسافر نواز بہتیرے‘‘کا اجرا عمل میں آیا۔ اس موقع پراردو اکادمی کے وائس چیئرمین پروفیسر اخترالواسع نے کہاکہ یہ ایک ناول ہے جو سفر نامہ کی شکل میں لکھاگیا ہے۔ ڈاکٹر خلیق انجم نے کہاکہ اس میں جو منظرکشی اور تبصرہ ہے اس سے لگتا ہے کہ عظیم اختر نے پاکستان کو بہت قریب سے دیکھا ہے۔انجم عثمانی نے کہاکہ عظیم اختر اتنا اچھا لکھتے ہیں کہ ان کی تحریروں کو پڑھنا پڑتا ہے۔حکومت دہلی کے سینئر آئی اے ایس آفیسر بی شکلا نے کہاکہ عظیم اختر کا درد اور شاعری سے بڑا گہرا رشتہ ہے۔ وہ جتنے اچھے ادیب اور فکشن نگار ہیں اس سے کہیں زیادہ اچھے افسر اور انسان ہیں۔اس موقع پر ایس ایم ظفر، مدیر عاکف کی محفل نے بھی اپنے خیالات کا اظہار کیا۔ پروگرام کی نظامت ’’بیسویں صدی‘‘ کی مدیرہ ڈاکٹر شمع افروز زیدی نے کی۔ تقریب میں مودودصدیقی، وقار مانوی، منیرہمدم، ڈاکٹر ظفر مرادآبادی، طارق فیضی، جاوید قمر اور دانش عظیم نے خصوصی طور پر شرکت کی۔

Share Article

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *