آپ کے خطوط، آپ کے ترجبات

اس شمارے میں ہم اپنے قارئین کے خطوط شامل کر رہے ہیں۔ان خطوط کے ذریعہ سے ہمارے قارئین نے کچھ مشورے مانگے ہیں تواپنے تجربات بھی ہم سے شیئر کیے ہیں۔ اس کے علاوہ اس شمارے میں ہم نے ایک درخواست فارم بھی شائع کیا ہے۔ آر ٹی آئی قانون کے تحت بنا یہ درخواست فارم آپ کے گائوں شہر میں چل رہے بجلی کے کام کے بارے میںاطلاعات مانگنے سے متعلق ہے۔

قارئین کے خطوط

داخلہ ملا نہ پیسہ
میں شروعات سے ہی ’’چوتھی دنیا‘‘ کا مستقل قاری رہا ہوں۔ آپ کے اخبار کے ذریعہ مجھے آر ٹی آئی کی بھی معلومات ہوئی، ساتھ ہی آپ کی طرف سے ممکنہ نمائندگی نے حوصلہ بڑھایا کہ میںبھی اپنا جائز پیسہ2550روپے واپس حاصل کر سکوں، جسے میں نے ڈیمانڈ ڈرافٹ کی شکل میںرجسٹری کے ذریعہ مولانا آزاد نیشنل اردو یونیورسٹی میں ایم اے اردو سال اول میں داخلہ کے لیے بھیجا تھا، لیکن نہ جانے کیوں میرا داخلہ نہیں ہو پایا اور ڈرافٹ بھی واپس نہیں آیا۔ محمد ایوب انصاری، جموئی
آپ ایک آر ٹی آئی درخواست دیکر (ڈرافٹ کی کاپی منسلک) اس تعلق سے اطلاع مانگ سکتے ہیں۔
غلط اطلاع ملی
میںنے جون2010کوآر ٹی آئی قانون کے تحت دہلی کے ڈپٹی گورنر اورڈی ڈی اے کے چیئر مین سے 17و18مئی2010کو جیت پور میں ہونے والی توڑ پھوڑ کی کاروائی پر جانکاری مانگی تھی۔جواب میں اے ڈی ایم جنوبی دہلی کے سریتا وہار میں ہونے والی اس توڑ پھوڑ کے واقعہ کو سرے سے ہی خارج کر دیا ہے۔ جب کہ یہ غلط اطلاع ہے۔اشرفل ہدیٰ، الفلاح ٹرسٹ ،دہلی
آپ اس کی شکایت براہ راست مرکزی انفارمیشن کمیشن میں کر سکتے ہیں۔
حج آفیسرسے وابستہ اطلاع نہیں ملی
میں نے سپرنٹنڈنٹ ڈاک گھر، مراد آباد منڈل سے انفارمیشن بورڈ پرحج آفیسر و معاون حج آفیسر کی مانگ سے متعلق سرکلر کے سلسلہ میں اطلاع مانگی تھی۔ اطلاع نہیں دی گئی اور کہا گیا کہ جس ادارے کے لیٹر پیڈ پراطلاع مانگی ہے وہ رجسٹرڈ ہے یا نہیں اس کی جانکاری دے تب اطلاع دی جائے گی۔
خورشیدالحسن، پوسٹل سماج ، مراد آباد
اطلاع آپ نے ذاتی دستخط کے ذریعہ مانگی تھی۔ پھر بھی اطلاع نہ دینے کے لیے غلط بہانا بنایا گیا۔ آپ اس کی شکایت ریاستی انفارمیشن کمیشن میں کر سکتے ہیں۔
مل گیا پی ایف
اشوک سنگھل کا تبادلہ کھنڈوا سے تملناڈو (چنئی) ہو گیا۔جس کے سبب انھوں نے  استعفیٰ دے دیا اور وہ گھر(بہار) واپس آ گئے۔پی ایف میں جمع رقم تقریباً16752روپے کا چیک ادارے کے ذریعہ غلط کھاتہ نمبر پر ایس بی آئی برانچ برونی(بہار) کو سال2002 میں ہی بھیجا گیا تھا، لیکن بینک نے کھاتہ نمبر درست کرکے بھیجنے کے لیے اسے ادارے کو واپس لوٹا دیا تھا۔ پھر وہ مجھ سے ملے اپریل2010میں آر ٹی آئی درخواست فارم بذریعہ ڈاک بھیجا گیا۔ پہلی اپیل کے بعد مذکورہ ادارے کے ذریعہ اشوک سنگھل کی مجموعی بقایا رقم سود سمیت فراہم کرادی گئی۔
گریش پرساد گپتا، برونی (آر ٹی آئی کارکن)
میرے سسر کو مالی فائدہ نہیں ملا
آپ کے چوتھی دنیا  ہفت روزہ اخبار کے ذریعہ مجھے آر ٹی آئی کی جانکاری لینی ہے۔ میرے سسر محترم بی ایل کوشل بھکن گائوں میں زرعی منڈی میںسکریٹری کے عہدے پر 1954سے کام کر رہے تھے۔ ان کی کارگزاری دیکھ کر ان کی ترقی ہوئی تھی۔1994 میں وہ سبکدوش ہوئے تھے ۔ ان کا عہدہ اول درجہ کا تھا۔ انہیں اپنے کام کی وجہ سے صدر جمہوریہ ایوارڈ ملا تھا، لیکن ان کی سبکدوشی تیسرے درجہ میں کیوں کی گئی اس کے بارے میں مجھے جانکاری چاہئے۔ اس تعلق سے میں نے آر ٹی آئی کے ذریعہ بھوپال زرعی منڈی کمیٹی کو پہلی اپیل بھیجی ہے۔ یہ پہلی اپیل میں نے 3جنوری2011کو بھیجی ہے۔
شالی گرام جواہر لال جی گپتا، امراوتی، مہاراشٹر
آپ اپیل کے فیصلے کا انتظار کریں۔ اگر اپیل کے بعد بھی مطلوبہ اطلاع نہیں ملتی ہے تب آپ اس معاملے میںدوسری اپیل ریاستی انفارمیشن کمیشن میں کر سکتے ہیں۔

بجلی کاری کی تفصیل

خدمت عالیہ میں        افسر برائے رابطہ ٔعامہ        (محکمہ کا نام)        (محکمہ کا پتہ)
عنوان:حق اطلاعات قانون 2005کے تحت درخواست
جناب،
گائوں………………….میںبجلی کے نظام کے تعلق سے مندرجہ ذیل اطلاعات فراہم کرائیں۔
-1 مذکورہ گائوں کے کتنے گھروں میںبجلی کے کنکشن ہیں؟ ہر ایک کنکشن ہولڈر کا نام اور پتہ بتائیں۔
-2مذکورہ گائوںجس بلاک میں آتا ہے اس بلاک میں پچھلے10برسوں کے دوران گائوں کی بجلی کاری کے لیے کتنی رقم الاٹ کی گئی ہے؟ سال کے حساب سے تفصیل مہا کریں۔
-3 کیا مذکورہ بلاک میں بجلی کاری اور اس کے رکھ رکھائو کا کام کسی ٹھیکیدار/ ایجنسی کے ذریعہ سے کرایا جا رہا ہے؟ اگر ہاں تواس سے متعلق مختلف اطلاعات فراہم کرائیں۔
الف:کام کا نام     ب:کام کی مختصر تفصیل    ج: کام کے لیے منظور کی گئی رقم    د: کام کے منظور ہونے کی تاریخ
ہ: کام ختم ہونے کی تاریخ اور چل رہے کام کی صورتحال    و: کام کرانے والی ایجنسی کا نام
ز:کام شروع ہونے کی تاریخ    ح:کام ختم ہونے کی تاریخ    ط: کام کے لیے ٹھیکہ کس شرح پر دیا گیا؟
ی: کتنی رقم کی ادائیگی کی جا چکی ہے؟    ک:کام کے نقشہ کی مصدقہ کاپی
ل: اس کام کو کرانے کا فیصلہ کب اور کس بنیاد پر لیا گیا؟اس سے متعلق فیصلہ کی کاپی بھی فراہم کرائیں۔    ے: ان معاون اور ایگزیکٹیوں انجینئروں کے نام بتائیں، جنھوں نے ان کا موں کا سروے کیا اور ادائیگی کی منظوری دی۔ ان کے ذریعہ کام کے کس حصہ کا سروے کیا گیا؟
میں درخواست فیس کی شکل میں10روپے الگ سے جمع کر رہا/رہی ہوں۔
یا میں بی پی ایل کارڈ ہولڈر ہوں اس لیے تمام طرح کی فیسوں سے آزاد ہوں۔ میرا بی پی ایل کارڈ نمبر ……….ہے۔
اگر مانگی گئی اطلاع آپ کے محکمے/دفتر سے متعلق نہیں ہو تو آر ٹی آئی قانون ایکٹ 2005کی دفعہ6(3) کا حوالہ دیتے ہوئے میری درخواست متعلقہ پبلک انفارمیشن آفیسر کو پانچ روز کے اندر منتقل کریں۔ ساتھ ہی ایکٹ کے پرووژن کے تحت اطلاع فراہم کراتے وقت پہلے اپیل افسر کا نام اور پتہ ضرور بتائیں۔
درخواست دہندہ
نام                پتہ
فون نمبر
منسلک اگر کچھ ہو

Share Article

2 thoughts on “آپ کے خطوط، آپ کے ترجبات

  • August 21, 2011 at 7:38 am
    Permalink

    چوتھے دنیا کہ پوری ٹیم کو عید مبارک ہو

    Reply
  • August 21, 2011 at 7:35 am
    Permalink

    مجھے چوتھے دنیا بہت پسند ھے آء لو یو چوتھے دنیا .

    Reply

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *