بالی ووڈ کے کامیاب ترین آئٹم نمبر

سلمان علی
بالی ووڈ میں آئٹم نمبر شروع سے ہی خاص مقام رکھتے آئے ہیں۔کچھ لوگ فلموں میں آئٹم نمبر کو پسند کرتے ہیں توکچھ لوگ نہیں ۔ کچھ آئٹم نمبر فلم کی کامیابی میں چار چاند لگا دیتے ہیں اور کچھ فلم کی ناکامی میں دب کر بھی رہ جاتے ہیں۔کچھ آئٹم نمبر اداکاروں کے کریئر کو بلندی پر پہنچا دیتے ہیں تو کچھ انہیں تنقید کا نشانہ بھی بنا دیتے ہیں۔سال 2010کی سب سے بہترین فلم ’’دبنگ‘‘ کا آئٹم نمبر ’’منی بدنام ہوئی‘‘اتنا مقبول ہوا کہ منی نام کی دوشیزائوں کا گھر سے نکلنا دشوار ہو گیا۔پھر کیا تھا ،ادھر منی بدنام ہوئی تو ادھر شیلا جوان ہو گئی ۔فلم’’ تیس مار خان‘‘ تو سپر فلاپ رہی لیکن اس کے آئٹم سانگ’’ شیلا کی جوانی ‘‘ نے ان کے چاہنے والوں کو پاگل بنا دیا۔ جس کا جادو ابھی تک لوگوں کے سر چڑھ کر بول رہا ہے۔یہ آئٹم نمبر سال کا سب سے ہٹ آئٹم نمبر رہا۔بالی ووڈ میں دہائیوں سے آئٹم نمبر کا استعمال ہو رہا ہے۔سب سے پہلے آئٹم نمبر کی شروعات بالی ووڈ میں اپنے زمانہ کی مشہور آئٹم گرل ہیلن نے کی۔ ان کا پہلا آئٹم سانگ ’’ میرا نام چن چن چو‘‘ فلم ’’ہوڑہ برج‘‘ سے تھا جو بے حد مقبول ہوا۔اس کے بعد انھوں نے ’’پیا تو اب تو آجا‘‘ فلم ’کارواں‘، ’محبوبہ محبوبہ’فلم ’شعلے‘ میں اپنے ڈانس اور حسن کے ایسے جلوے بکھیرے کہ وہ اس زمانہ کی نمبرون آئٹم گرل بن گئیں۔ہیلن کی ایک خاصیت یہ تھی کہ وہ فلم کی کہانی کو ذہن میںرکھتے ہوئے ہی اپنی کارکردگی کا مظاہرہ کرتی تھیں۔
اس کے بعد کئی اداکارائوں کے آئٹم نمبر آئے ۔ان میں ارونا ایرانی، زینت امان، بندو، پروین بابی جیسی اداکارائیں قابل ذکر ہیں۔پھر آیا جدید دور، جس میں اداکارائوں کے ساتھ ساتھ اداکاروں کے بھی آئٹم نمبر آنے لگے۔ جس میں شاہ رخ خان اور رتک روشن نمبر ون پر ہیں۔انھوں نے ’’کریزی4‘‘ میں اپنے بہترین رقص کا مظاہرہ کیا، فلم تو سپر فلاپ رہی لیکن آئٹم نمبر نے فلم میںکچھ جان ڈال دی۔اصل میں فلم میں چار چاندلگانے کے لئے شروع سے ہی آئٹم نمبرںو کا سہارا لیا جاتا رہا ہے۔کبھی کبھی تو ایسا ہوتا ہے کہ فلم کتنی بھی فلاپ کیوں نہ جائے اگر اس فلم کا آئٹم سانگ کامیاب رہا تو وہ یادگار ہو جاتی ہے۔یہی وجہ ہے کہ فلمسازوں نے آئٹم نمبروں کو فلم کو دلچسپ اور بہترین بنانے کے فارمولے کے طور پر استعمال کیا۔پہلے صرف خاص آئٹم گرل کہی جانے والی ڈانسر ہی ایسے رول کیا کرتی تھیں۔فلموں میںبطور اداکارہہونے کے باوجود بھی کئی اداکارائوں نے آئٹم نمبر کا سہارا لیا ہے۔اب ایشوریہ رائے سے لے کر بپاشا بسو، کرینہ کپور، آرتی چھابڑیہ، یانا گپتا،راکھی ساونت ،دپیکا پادوکون،شلپا شیٹی، کیٹرینہ کیف، ملائکہ اروڑہ خان جیسی دوشیزائیںتک آئٹم نمبر کرنے کے لئے بے چین رہتی ہیں۔آیئے دیکھتے ہیں گزشتہ سالوں میں کن پھڑکتے گانوں نے بالی ووڈ میں دھوم مچائی ہے۔
کیبرے ڈانس میں ہیلن کا جواب نہیں تھا، لیکن اگر ان کے کسی ایک آئٹم کو منتخب کرناہو تو وہ رمیش شپی کی فلم ’شعلے‘ کا’’محبوبہ محبوبہ‘‘ہی ہوگا ۔جپسی کی پوشاک میں ویسی ہی دھن پر ہیلن جم کر ناچیں اور وہ گانا سپرہٹ ہوگیا۔بعد میں ارملا مانتوڈکر اور ملکہ سہراوت نے بھی اس گانے کے ریمکس پیش کئے لیکن ہیلن کے سامنے پھیکی ہی رہیں۔
آئٹم نمبر کو کلاسیکل ادا میں پیش کیا جھیل سی آنکھوں والی ایشوریہ رائے نے امیتابھ اور ابھیشیک بچن کے ساتھ فلم ’’بنٹی اور ببلی ‘‘ میں ’’کجرارے کجراے‘‘ میں۔گلزار کے ذریعہ تخلیق کردہ اورالیشا چنائے کی آواز والے اس گانے میں گلابی گھاگھرا چولی میں سجیں ایشوریہ کی پتلی کمر نے وہ ٹھمکے لگائے کہ پورا ملک اس گانے کا دیوانہ ہو گیا۔
ایسا آئٹم نمبر ہندی فلموں میں کبھی نہیں دیکھا گیا ۔ چلتی ٹرین کی چھت پر ملائکہ اروڑہ خان کی کمر کے جھٹکے اور اس پر جھومتے شاہ رخ خان ۔یہ گانا تھا فلم ’’دل سے‘‘ کا ’’چل چھیاں چھیاں‘‘ فلم تو مہا فلاپ رہی لیکن یہ گانا فلم کا کامیاب ترین حصہ رہا۔
’’دیکھ لے ‘‘ فلم ’’منا بھائی ایم بی بی ایس‘‘اس گانے کے بعد اسپتال کے نام سے لوگوں کی دل کی دھڑکنیں بڑھنے لگیں۔یہ گانا تھا میموتھ خان اور جمی شیر گل کا۔ جو انھوں نے اسپتال کے بیڈ پر فلمایا تھا۔ اس بڑی ہٹ فلم کا کامیاب حصہ رہا۔اس گانے کے بعد مموتھ خان جنوبی فلم انڈسٹری میں چلی گئیں۔
فلم’’چائنا گیٹ‘‘ سپر فلاپ رہی لیکن اس کا گانا’’چھما چھما‘‘ بے حد مقبول رہا۔ارملا مانتوڈکر کا بھاری زیوارات اور پوشاک میں سج کر کیا گیا یہ گانا پردۂ سیمیں کے شائقین کو انگلیوں پر نچا گیا۔یہ تو اتنا ہٹ گیا کہ ہالی ووڈ کی فلم ’’مولاں روز‘‘ تک میں اس کو خاص مقام حاصل ہوا۔
فلم ’’ بامبے‘‘کا گانا’’ ہماہما‘‘۔ فسادات جیسے پس منظر پر مبنی اس فلم میں سونالی بیندرے نے یہ بلیڈ پریشر بڑھا دینے والا سلگتا ہوا آئٹم نمبر کیا تھا۔ گانے کے پس منظر میں منیشا کوئرالہ اور اروند سوامی کا معاشقہ بھی اتنا ہی اہم تھا۔
آئٹم نمبر کے معاملہ میں فلم ’’شول ‘‘کو کون بھلا سکتا ہے۔جی ہاں ’’ میں آئی ہوں یو پی بہار لوٹنے ‘‘ میں شلپا شیٹی کی پتلی کمر کا جادو سر چڑھ کر بولا۔شول جیسی سنجیدہ فلم کا گانا شروع میں بھلے ہی رکشہ پلروں کی پسند بنا لیکن بعد میں ان کی پتلی کمر کا جادو سب پر چھا گیا اور ان کے لڑکھڑاتے کریئر میں جان ڈال گیا۔
فلم ’’دم‘‘ کا نام تو کسی کو بھی یاد نہیں رہا لیکن اس کا آئٹم نمبر ’’بابو جی ذرا دھیرے چلو‘‘میں تھرکتیں یانا گپتا کی دھوم مچ گئی۔اس کے بعدآتا ہے فلم ’’گرو‘‘ کا ’’میامیا‘‘۔ جس میں ملکہ سہراوت نے پھر ثابت کر دکھایا کہ انہیں’’سیکسی سندری‘‘ کیوں کہا جاتا ہے۔اے آر رحمن کی دھن پر اس گانے میں ملکہ نے سب کے ہوش اڑا دئے۔
کون سوچ سکتا تھا کہ ٹوٹے دل کی داستاں پر آئٹم نمبر کیا جا سکتا ہے لیکن ملائکہ اروڑہ خان نے فلم ’’کانٹے‘‘ میں ’’ماہی وے‘‘ گانے پر یہ بھی کر دکھایا۔فلم ’’کانٹے ‘‘ کے اس گانے پر ان کا ڈانس اس ایکشن فلم کا ایک خاص حصہ بن گیا۔اس کے بعد ملائکہ اروڑہ خان نے فلم’’ ویلکم‘‘ میں’’ہونٹ رسیلے تیرے ہونٹ رسیلے‘‘ میں اپنے آئٹم ڈانس سے سب کو پاگل بنا دیا۔
آئٹم نمبر میں ’’بلو رانی ‘‘ کو بھی نظر انداز نہیں کیا جا سکتا۔جی ہاں بپاشا بسو کا فلم ’’گول‘‘کا ’’بلو رانی‘‘ گانا بے حد مقبول ہوا۔ پھر بعد میں فلم ’’اومکارہ ‘‘میں انھوں نے ’’بیڑی جلئی لے‘‘ اور ’’نمک عشق کا‘‘ کئے ۔جس نے اس فلم کی کامیابی میں چار چاند لگا دئے۔آئٹم سانگ اب بھی اپنا رجحان پھیلا رہے ہیں اور آگے بھی پھیلاتے رہیں گے۔ خواہ جسم کی نمائش کا الزام لگے یا عریانیت پھیلانے کا ۔آئٹم نمبر کی بڑھتی مقبولیت ان سب سے پرے ہے۔خیر بالی ووڈ میں اتنے آئٹم نمبر ہیں کہ اگر ان کی فہرست دی جائے تویہ مضمون کافی لمبا ہو جائے گا۔دیکھتے ہیں اس سال کتنی فلموں میں آئٹم نمبر کا تڑکا لگایا جائے گا۔
اس سال کی سیکول فلمیں
اس سال بالی ووڈ میں سب سے خاص بات یہ ہے کہ اس سال کئی فلموں کے سیکول آنے والے ہیں۔ ان میںشاہ رخ خان کی اداکاری والی ’ڈان 2‘ بھی شامل ہے۔اس  فلم میںاس بار کئی نئے چہرے ہیں۔ایشا کوپیکر کی جگہ لارا دتہ نے لے لی ہے اور کونال کپور سمیر علی کے کردار میں نظر آئیں گے ۔اس کے علاوہ  رتک روشن اور سمیرا ریڈی کی اس میں خصوصی آمد ہے۔دوسری فلم ’’دھمال 2‘‘آ رہی ہے۔جو سنجے دت، جاوید جعفری، رتیش دیشمکھ، آشیش چودھری، کنگنا رناوت،ستیش کوشک،ملکہ سہراوت، سنجنا مشراکی اداکاری سے سجی اس سال کے درمیان میں ریلیز ہونے جا رہی ہے۔علاوہ ازیں اس سال کی تیسری سنجے گدھوی کے ڈائریکشن میں سیکول فلم ’’دھوم3‘‘ سال کے آخر میں ریلیز ہونے جا رہی ہے ۔ اس کے علاوہ ترون منسوکھانی کی ’’دوستانہ2‘‘ بھی اسی سال ریلیز ہونے جا رہی ہے۔انیس بزمی کی کامیڈی سے بھرپور فلم’’ ہیرا پھیری4‘‘ بھی اسی سال ریلیز ہونے جا رہی ہے۔اس کے علاوہ ’’نو انٹری‘‘ کا دوسرا پارٹ’’نو انٹری میں انٹری‘‘، ’’پارٹنر 2‘‘،’ریس2‘‘،’’راک آن2‘‘ بھی اسی سال ریلیز ہونے والی فلموں میں شامل ہیں۔

Share Article

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *