بدمعاش کمپنی

جدیدیت اور مغربی تہذیب سے متاثر ہونے والے نوجوانوں کی کہانی پر مبنی فلم ’بدمعاش کمپنی‘ دراصل آج کل کے نوجوانوں کی ذہنیت کو اجاگر کرتی ہے۔ ہندوستانی سماج میں نوجوانوں کو غیرملکی رہن سہن کی عادتیں اور کھوکھلاپن تیزی سے اپناتے ہوئے دیکھا جارہا ہے۔ اس میں معزز طبقہ کے نوجوانوں پر زیادہ فرق نہیں پڑتا، جب کہ متوسط طبقہ  میں پروان چڑھنے والے نوجوان اس طریقۂ زندگی کا خمیازہ بھگتتے ہیں۔ ہندوستانی سماج کا متوسط طبقہ عزت اور ایمانداری کو اپنی سب سے بڑی دولت سمجھتا ہے، جب کہ آج کل کے نوجوان ان اصول کو روندتے ہوئے عیاشی اور موج مستی کے ساتھ آگے بڑھنا چاہتے ہیں۔ اس پرکشش زندگی میں نوجوانوں کو کن پریشانیوں کا سامنا کرنا پڑتا ہے اور اس راستے پر چلتے ہوئے اپنی زندگی میں کن خاص چیزوں کو وہ کھو دیتے ہیں، اسی چیز کو فلم ’بدمعاش کمپنی‘ میں دکھایا گیا ہے۔ متوسط طبقہ سے تعلق رکھنے والے 4دوست شاہد(کرن)، انشکا(بلبل)، میانگ چانگ(جینگ) اور ویرداس کم وقت میں زیادہ پیسہ کمانا چاہتے ہیں۔ کرن اپنے تیز طرار دماغ اور اعلیٰ فکرکے سہارے اپنے دوستوں کی مدد سے امیر بن جاتا ہے۔ ان چاروں دوستوں کی ’بدمعاش کمپنی‘ بڑے بڑے کارنامے کرتی ہے۔ فرینڈس اینڈ کمپنی اتنی امیر ہوجاتی ہے کہ وہ ماننے لگتے ہیں کہ وہ جو چاہیں کر سکتے ہیں۔ وہ خود کو بھگوان ماننے لگتے ہیں۔ اس وجہ سے ان کے لالچ میں اضافہ ہوتا رہتاہے۔ یہ لالچ ان میں آپسی دراڑ پیدا کر دیتا ہے۔ آخراکیلا چنا بھاڑ نہیں پھوڑ پاتاہے اور زیادہ پیسے کمانے کے اس کھیل میں متوسط طبقہ کی پونچی یعنی عزت اور ایمانداری دونوں ختم ہوجاتی ہیں۔ آخر کار ’لوٹ کے بدھو گھر واپس آئے‘ والی حالت ہوتی ہے۔ فرینڈس اینڈ کمپنی کے اس کھیل کو بے حد خوبصورتی سے فلمایا گیا ہے۔ سیدھے ٹریک پر کہانی چلتی ہے اور کہیں بھی کنفیوژ نہیں کرتی۔ کہانی میں کئی جگہ سسپنس کافی دلچسپ اور مزے دار ہے۔ بیچ بیچ میں دیا گیا مزاح بے حد اچھا ہے۔ شاہد کپور اور انشکا شرما نے کافی اچھی ایکٹنگ کی ہے۔ ویر داس نے بھی اچھا کام کیا ہے۔ فلم میں چانگ کے شمال مشرقی لُک کی وجہ سے چندو اسے بار بار چینی کہہ کر چڑھاتا ہے۔ یہ عام ہندوستانیوں کے دوہرے جذبات کو اجاگر کرتا ہے۔ چانگ کی یہ پہلی فلم ہونے کے باوجود وہ اپنے رول میں بالکل فٹ ہیں۔ ڈائریکٹر پرمیت شیٹی نے اپنی پہلی ہی فلم میں اداکاروں کی بہترین طریقے سے ڈائریکشن کی ہے۔ نوجوانوں کا خیال کرتے ہوئے بنائی گئی اس فلم میں ایکٹنگ، مزاح، سنجیدگی اور سبجیکٹ بالکل صحیح ہے۔ کہانی اور ٹریٹمنٹ کے لحاظ سے فلم نوجوانوں کو ضرور پسند آئے گی۔

Share Article

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *