بجلی مہنگی کرنا چاہتی ہیں کمپنیاں

نئی دہلی: دہلی کے شہریوں کو جلد ہی بجلی کا ’ کرنٹ‘ لگ سکتا ہے۔ بجلی کمپنیوں کے مطابق بجلی بل میں اپریل سے70فیصد تک کا اضافہ ہو جائے گا۔ نقصان کا حوالہ دیتے ہوئے بجلی کمپنیاں بجلی شرحبڑھانے کا مطالبہ کر رہی ہیں۔ کمپنیوں نے اس بات کا ذکر ڈی ای آر سی کو دیئے گئے اپنے ایگریمنٹ ریونیو رکوائرمنٹ (اے آر آر) میں کیا ہے۔ڈی ای آر سی کے مطابق انھوں نے کمپنیوں کے ذریعہ دیےے گئے اے آر آر کو اپنی وئب سائٹ پر پبلک اوپینین لینے کے لئے ڈال دیا ہے۔ اس میں بی ایم ای ایس یمنا نے موجودہ ٹیرف میں64.04،بی ایس ای ایس راجدھا نی نے 69.60اور این ڈی پی ایل نے 52.48فیصد تک اضافلہ کی بات کہی ہے۔ این ڈی ایم سی نے موجودہ ٹیرف کو ٹھیک بتاتے ہوئے اس میں کسی طرح کا اضافہ کی بات نہیں کہی ہے۔ این ڈی پی ایل نے بتایا ہے کہ اسے 2008-09میں 1436.17کروڑ روپے،بی ایس ای ایس راجدھان کو 2795,34کروڑ اور بی ایم ای ایس یمنا کو 1308.76کروڑ روپے کا نقصان ہوا ہے۔ حالانکہ این ڈی ایم سی نے بتایا کہ اس کوئی نقصان نہیں ہوا ہے اس میں اضافہ ہی ہوا ہے۔
بجلی کمپنیوں کا کہنا ہے کہ ڈی ای آر سی کو اس طرح کاسسٹم شروع کرنا چاہئے جس میں جس شرح پر بجلی کمپنیاں بجلی خریدتی ہیں، صارفین کو بھی اسی شرح پر بجلی مہیا کرائی جائے۔ اگر ایسا ہوا تو اپریل 2010میں بجلی بل میں70فیصدی تک کا اضافہ ہو جائے گا۔ بجلی بل میں یہ اضافہ کمپنیاں لاگت اور ریونیو کے فرق سے طے ہوگا۔ یہ فاصلہ جتنا زیادہ ہوگا، بجلی اتنی مہنگی پڑے گی۔ کمپنیوں نے اپنے دو سال کے فاصلہ بھی مٹانے کی بات کہی ہے۔ یہ فاصلہ 1300سے 3000ہزار کروڑ روپے تک کا ہے۔

Share Article

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *