لڑکی نے لڑکی کاریپ کیا،گرفتار

Share Article
rape
دہلی پولس نے ایک 19سال کی لڑکی کو25سال کی خاتون کے ساتھ ریپ کے الزام میں گرفتارکیاہے۔الزام ہے کہ لڑکی نے متاثرہ 25سالہ خاتون سے سیکس ٹوائے کے ذریعہ ریپ کیاہے۔ملزم لڑکی کوعدالت نے عدالتی حراست میں بھیج دیاہے۔پولس کے مطابق، خاتون سے اجتماعی ریپ کا یہ معاملہ پچھلے سال 2018ستمبرمیں سامنے آیاتھا۔لیکن تب دہلی پولس نے معاملے میں تین نوجوانوں کے خلاف مقدمہ درج کیاتھا۔اس وقت ملزم 19سال کی لڑکی پرمقدمہ درج نہیں کیاتھا کیونکہ اس کا کہناتھا کہ سپریم کورٹ نے ہم جنس پرستی (دفعہ377) کوجرم کے زمرے سے باہرکردیاہے۔
متاثرہ خاتون کا دعویٰ تھاکہ ملزم 19سالہ لڑکی نے اس کے ساتھ کئی ریپ کیا اورمارپیٹ کی۔جانکاری کے مطابق، سی آرپی سی کی دفعہ 164کے تحت کڑکڑڈوما کورٹ میں مجسٹریٹ کے سامنے ملزم لڑکی کے بیان درج کرائے گئے تھے۔اسی بنیادپراسے اب گرفتارکیاگیاہے اورایک دن کی پولس ریمانڈ پرلیاگیا۔کورٹ نے ملزم لڑکی کواب جوڈیشل کسٹڈی میں بھیج دیاہے۔سپریم کورٹ کا پچھلے سال ستمبرمیں ایک ہی سیکس کے آپس میں تعلقات بنانے کوجرم کے زمرے سے باہرکرنے کے بعد شاید یہ پہلا معاملہ ہے۔
متاثرہ اورملزم کسی کے ذریعے ایک دوسرے سے ملے تھے۔پھراس کی ملاقات ملزم لڑکی کے دوبھائی روہت اورراہل سے ہوئی۔الزام ہے کہ دونوں متاثرہ کودلشادکالونی کے ایک اپارٹمنٹ میں لے گئے اوروہیں اسکے ساتھ گینگ ریپ کیا۔پھرویڈیوبناکرمتاثرہ کوبلیک میل کرنے لگے۔الزام ہے کہ 19سال کی لڑکی اس کی رکھوالی کرتی تھی اوراسی دوران وہ سیکس ٹوائے سے متاثرہ کے ساتھ تعلقات بناتی تھی۔اس معاملے میں پولس نے تین مرد ملزموں کوگرفتارکیاتھا لیکن 19سال کی لڑکی کوچھوڑدیاتھا مگراب اسے بھی ریپ کے الزام میں دفعہ 377(ہم جنس پرستی)کے تحت گرفتارکیاگیاہے۔
Share Article

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *