نابالغ لڑکے کو اغوا کرنے کے الزام میں 19 سالہ لڑکی گرفتار، تفتیش میں ہوا خوفناک انکشاف

Share Article

بھوپال: مدھیہ پردیش کے علی راج پور ضلع میں ایک نابالغ قبائلی لڑکی کو اغوا کرنے کے الزام میں ایک 19 سالہ قبائلی لڑکی کو پولیس نے گرفتار کیا ہے۔ دونوں لڑکیوں نے کہا ہے کہ وہ ایک دوسرے سے محبت کرتی ہیں اور شادی کرنا چاہتی ہیں۔17 سالہ لڑکی کے خاندان کی شکایت پر اودے گڑھ پولیس اسٹیشن میں پولیس نے کارروائی کرتے ہوئے کچھ دن پہلے 19 سالہ لڑکی کے خلاف تعزیرات ہند کی دفعہ 363 کے تحت اغوا کا مقدمہ درج کیا تھا۔

علی راج پور ضلع کے پگولا گاؤں کی رہنے والی دونوں لڑکیاں ایک سال سے ایک دوسرے کے قریب تھیں، چند ماہ قبل وہ اپنے گاؤں سے بھاگ کر گجرات چلی گئی تھیں اور پانچ ماہ پہلے لوٹی تھیں۔ اس کے بعد، اس معاملے کو گاؤں کی پنچایت کے سامنے رکھا گیا، جس نے توڑ کے تحت اغوا کی ملزم لڑکی کے خاندان پر ایک بکری اور 77،000 روپے کا جرمانہ عائد کیا تھا۔ بھیل قبائلی پنچایت کے فیصلے کے مطابق ملزم کے خاندان نے 17،000 روپے اور پنچایت کو ایک بکری دی، اس کے علاوہ دوسری طرف 60،000 روپے ادا کرنے کے ساتھ ہی یہ یقین دہانی کرائی کہ ان کی بیٹی کا مستقبل میں ان کی لڑکی کے ساتھ کوئی رابطہ نہیں ہو گا۔

حالانکہ دو ماہ قبل، دونوں لڑکیاں پھر سے لاپتہ ہو گئیں، جس کے بعد نابالغ کے خاندان نے اغوا کا مقدمہ درج کروایا۔ جوبٹ کے ایس ڈی او پی آرسی بھاكر نے کہا، دونوں لڑکیاں ایک دوسرے کے ساتھ چکر رکھ سکتی ہیں، لیکن قانون کے مطابق چونکہ دوسری لڑکی نابالغ ہے اس لیے اس کے خاندان کی شکایت پر کارروائی کرتے ہوئے اغوا کا مقدمہ درج کیا گیا۔

Share Article

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *