MODI-AMIT-SHAHنئی دہلی۔ 2014 کے لوک سبھا انتخابات کے منظر پر چھا جانے والے وزیر اعظم نریندر مودی کی لہر آج ایک مرتبہ پھر اتر پردیش اور اتراکھنڈ میں سامنے آئی۔ بھارتیہ جنتا پارٹی (بی جے پی) اترپردیش میں 14 سال کے طویل وقفے کے بعد ایک بار پھر اقتدار کے تخت کی جانب گامزن ہے وہیں پہاڑی ریاست اتراکھنڈ میں بھی بی جے پی کافی مضبوط پوزیشن میں ہے۔ تاہم، کانگریس کے لیے یہ کافی خوشگوار اتفاق ہے کہ پنجاب کے اقتدار میں اس کے واپس آنے کے واضح اشارے سامنے آ رہے ہیں۔ کانگریس کے لیے یہ بھی قابل ذکر ہے کہ گوا میں اب تک ووٹوں کی گنتی میں وہ برتری بنائے ہوئے ہے۔
اترپردیش میں ابھی تک 328 نشستوں کے دستیاب ابتدائی رجحانات کے مطابق بی جے پی 231، کانگریس ایس پی اتحاد 70 اور بہوجن سماج وادی پارٹی 29 سیٹوں پر آگے چل رہی ہے۔ پنجاب میں کانگریس 61 سیٹوں پر برتری بنائے ہوئے ہے جبکہ یہاں کی انتخابی سیاست میں پہلی بار قدم رکھنے والی عام آدمی پارٹی (آپ) 21 سیٹوں پرآگے رہ کر اپنی بہترین کارکردگی کا مظاہرہ کر رہی ہے۔یوپی، اتراکھنڈ میں مودی کا جادو، کانگریس پنجاب میں مضبوط، گوا میں کانگریس۔ بی جے پی کے درمیان کانٹے کی ٹکرگوا میں کانگریس اور بی جے پی کے درمیان بالترتیب آٹھ اور سات سیٹوں پر برتری کے ساتھ کانٹے کی ٹکر چل رہی ہے۔ منی پور میں بی جے پی سات اور کانگریس تین سیٹوں پر آگے ہے۔

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here