پارٹی کی کمان اکھلیش یادو کو سونپیں ملائم سنگھ

Share Article

n-d-tiwari-580x395ملک کی سب سے بڑی ریاست اترپردیش میں 11 مارچ سے اسمبلی انتخابات کا مرحلہ شروع ہورہا ہے، لیکن برسراقتدار سماجوادی پارٹی ابھی تک اپنے خاندانی جھگڑے میں الجھی ہوئی نظر آرہی ہے۔ وزیر اعلیٰ اکھلیش یادو اور ان کے والد ملائم سنگھ یادو میں سماجوادی پارٹی کی کمان حاصل کرنے کے لیے زبردست جنگ چھڑی ہوئی ہے۔ اصلی سماجوادی پارٹی ملائم سنگھ یادو کی ہے یا ان کے بیٹے وزیر اعلیٰ اکھلیش یاد وکی ہے، اس کے انتخابی نشان ’سائیکل ‘کے لیے معاملہ چیف الیکشن کمشنر کے آفس میں پہنچا ہوا ہے۔اس بارے میں جلدی ہی فیصلہ ہوجائے گا۔ باپ بیٹے میں پارٹی کو لے کر ہورہی مہابھارت کی وجہ سے عوام میں بھی بے چینی پائی جاتی ہے۔ اس سلسلے میں کانگریس کے سابق وزیر اعلیٰ نارائن دت تیواری نے ملائم سنگھ کو خط لکھ کر سجھاؤ دیا ہے کہ وہ پارٹی کی کمان اپنے بیٹے کے ہاتھ میں سونپ دیں۔ سابق بزرگ وزیر ا علیٰ شری نارائن دت تیواری نے ملائم سنگھ یادو کو خط میں لکھا ہے کہ ’گزشتہ کچھ دنوں سے سماجوادی پارٹی میں چل رہے تنازع سے میں بہت افسردہ ہوں۔ میں نے آپ کو ہمیشہ اپنے چھوٹے بھائی کے طور پر مانا ہے اور شری اکھلیش یادو کو اپنے بھتیجے کے طور پر دیکھا ہے۔ میرا سجھاؤ اور درخواست ہے کہ آپ اپنے بیٹے شری اکھلیش یادو کو پارٹی کی ذمہ داری سونپیں اور پورا آشیرواد دیں۔ ‘

Share Article

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *