فلسطین کی ترقی میں حصہ دار رہے گا ہندوستان: وزیر اعظم مودی

Share Article

ہندوستان نے مغربی ایشیا میں جاری تنازعہ کے پرامن اور پائیدار سیاسی کوششوں کے ذریعے حل تلاش کئے جانے پر زور دیتے ہوئے آج کہا کہ وہ فلسطین کی معیشت اور وہاں کے عوام کے معیارزندگی کو بہتر بنانے کی کوششوں میں اس کا پارٹنر بنا رہے گا۔ وزیر اعظم نریندر مودی نے فلسطین کے صدر محمود عباس کے ساتھ آج یہاں حیدرآباد ہاؤس میں وفد کی سطح پر دو طرفہ میٹنگ کے بعد مشترکہ بیان میں یہ یقین دلایا۔
اجلاس میں ہندوستان نے فلسطین کے ساتھ کھیل، زراعت، صحت اور انفارمیشن ٹیکنالوجی و الیکٹرانکس کے شعبوں میں تعاون بڑھانے اور دونوں فریقوں کے سفارتی اور سرکاری پاسپورٹ ہولڈروں کو ویزا کی چھوٹ دیئے جانے کے سلسلے میں پانچ مختلف معاہدوں پر دستخط کیے۔
مسٹر نریندر مودی نے اپنے بیان میں فلسطین مسئلے کے تئيں ہندوستان کی حمایت کا اعادہ کرتے ہوئے کہا کہ” ہمیں امید ہے کہ ایک خود مختار، آزاد، مستقل اور قابل عمل فلسطینی ریاست قائم ہوگی اور وہ اسرائیل کے ساتھ پرامن طریقے سے بقائے باہمی کے جذبے سے رہے گی۔ انہوں نے کہا کہ مسٹر محمود عباس کے ساتھ ان کی بات چیت میں مغربی ایشیا کے مسا‏ئل اور مغربی ایشیا میں امن و استحکام کے حالات پر تفصیلی تبادلہ خیال ہوا۔ ہم اس بات پر متفق ہوئے کہ مغربی ایشیا کے چیلنجوں کا حل سیاسی مذاکرات کے ذریعے اور پرامن طریقے سے ہو۔انہوں نے کہا کہ ہندوستان چاہتا ہے کہ فلسطین اور اسرائیل کے درمیان ایک جامع حل تلاش کرنے کے لیے بات چیت جلد سے جلد شروع ہو۔ دو طرفہ سطح پر ہندوستان فلسطین کی ترقی میں پارٹنر رہے گا۔
وزیراعظم نے کہا کہ رملہ میں ٹیکنالوجی پارک پروجیکٹ ہندوستان کے تعاون سے چل رہا ہے۔ اس کی تکمیل پر یہ ایک آئی ٹی ہب بنے گا جہاں آئی ٹی سے متعلق تربیت اور خدمات کی سہولتیں دستیاب ہوں گی۔ مسٹر مودی نے ثقافتی تبادلے میں یوگا کو بھی شامل کرتے ہوئے کہا کہ وہ فلسطین کے لوگوں کو اگلے ماہ بین الاقوامی یوگا دن کے پروگراموں میں بڑی تعداد میں شرکت کرتے ہوئے دیکھنا چاہتے ہیں۔ اس سے پہلے مسٹر محمود عباس کا آج صبح راشٹر پتی بھون کے احاطے میں رسمی خیر مقدم کیا گیا۔ بعد میں وہ راج گھاٹ گئے اور مہاتما گاندھی کی سمادھی پر نذرانہ عقیدت پیش کئے۔ اس کے بعد وزیر خارجہ سشما سوراج نے مسٹر محمود عباس سے ملاقات کی۔ یہ سبھی تصویریں یو این آئی کی ہیں۔

Share Article

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *